جاوید شیخ لوگوں کی زندگیاں روشن کرنے کا شوق رکھتے ہیں

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 20 d ago
جاوید شیخ لوگوں کی زندگیاں روشن کرنے کا شوق رکھتے ہیں
جاوید شیخ لوگوں کی زندگیاں روشن کرنے کا شوق رکھتے ہیں

 

وویک پانمند،پونے

دوسروں کی خوشی کے لیے اپنے آپ کو قربان کر دو، اللہ اس کا اجر ضرور دے گا... ایسی باتیں ہم نے صرف صوفیوں کی کہانیوں میں سنی ہیں لیکن ہمارے ارد گرد ایسے لوگ ہیں جو خاموشی سے اس راستے پر چل رہے ہیں۔ پونے کا ایک نوجوان جاوید شیخ ان میں سے ایک ہے۔ جاوید کی کہانی جو زندگی میں روشنی اور خوشی کا ذریعہ بنی ہے، ہر ایک کے لیے تحریک اور رہنمائی کا ذریعہ بن سکتی ہے۔ تقریباً ہر شہر میں ہر جگہ روشنیاں ہی روشنیاں ہیں لیکن اس چکاچوند میں، تاریک جھونپڑیوں اور بجلی کے بغیر گھر اکثر نظر انداز ہو جاتے ہیں۔ ہماری نظریں ان تاریک گھروں کی طرف نہیں جاتیں۔ لیکن ان گھروں کے اندھیرے نے سنجیدہ جاوید کی توجہ اپنی جانب مبذول کرائی۔ اور جاوید نے انہیں دوبارہ روشن کرنے کی ذمہ داری اٹھا لی۔

جاوید پونے کے یرواڈا علاقے میں رہتے ہیں۔ اس علاقے سے گزرتے ہوئے انہوں نے کئی گھروں میں اندھیرا پھیلتا دیکھا۔ وہاں جا کر دریافت کیا تو جواب ملتا کہ 'بجلی کا کنکشن لینے کے پیسے نہیں' یا 'بلوں کی عدم ادائیگی کی وجہ سے لائٹ کا کنکشن ہٹا دیا گیا ہے'۔ جاوید غریبوں کی بے بسی دیکھ کر دکھی رہتے تھے۔ انہوں نے اپنے علم کو ان ضرورت مند لوگوں کی مدد کے لیے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس اندھیرے کو دور کرنے کے لیے انہوں نے شمسی توانائی کو استعمال کرنے کا فیصلہ کیا، کیونکہ یہ توانائی کا قابل تجدید ذریعہ ہے۔ چونتیس سالہ جاوید شیخ پونے میں پیدا ہوئے۔

awaz

گھر کا اندھیرا ان کے لیے کوئی نئی بات نہیں تھی کیونکہ بچپن سے ہی ان کا خاندان بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے مسائل کا سامنا کر رہا تھا۔ اسی لیے جب وہ بڑے ہوئے تو ایسے اندھیرے گھروں میں روشنی لانے کا خواب دیکھا۔ انہوں نے اپنی ڈگری سنہا گڑھ کالج آف انجینئرنگ، پونے سے حاصل کی۔ ضرورت مندوں کی مدد کرنا جاوید کی خاندانی روایت رہی ہے۔ اس لیے جاوید کا ذہن بچپن سے ہی سماجی خدمت کی طرف راغب تھا۔ عموماً تعلیم مکمل کرنے کے بعد طلباء نوکریوں کی تلاش شروع کر دیتے ہیں۔ زیادہ تر لوگ کم خطرے اور معاشی استحکام والی ملازمتوں کو ترجیح دیتے ہیں لیکن جاوید نے کاروبار شروع کر دیا۔ کہا جاتا ہے کہ گھر میں خیالات کی وراثت خود بخود اگلی نسل کو منتقل ہو جاتی ہے۔

جاوید اپنے چچا صادق شیخ کو دیکھ کر بڑے ہوئے۔ ان کے کام کو دیکھ کر وہ چاہتے تھے کہ ہم معاشرے کے لیے مزید کام کریں۔ جاوید اس بات پر زور دیتے ہیں کہ انہیں اپنے کام کے لیے اپنے چچا سے تحریک ملی۔ جاوید کا ایک چھوٹا سا خاندان ہے۔ خاندان ماں، بیوی اور بڑی بہن پر مشتمل ہے۔ جاوید کی طرح ان کی بڑی بہن وازیہ بھی سماجی خدمت کرنا چاہتی تھیں۔ اس لیے دونوں نے مل کر اپنے والد کی یاد میں 'یوسف فاؤنڈیشن' قائم کی۔ ان کا مقصد صرف ایک تھا، کہ ان کے والد کے نام کی خوشبو سماجی کاموں کی صورت میں معاشرے میں ہمیشہ برقرار رہے۔

گھر والوں نے بھی دونوں کے فیصلے کا ساتھ دیا اور کام شروع ہو گیا۔ 2020 میں جب کورونا وبا اپنے عروج پر تھی، یوسف فاؤنڈیشن کے کام کی بنیاد رکھی گئی۔ اب جاوید کے پاس کھلے آسمان کے ساتھ ساتھ سماجی خدمت کا ذریعہ بھی تھا۔ وہ اس بات پر پختہ یقین رکھتے تھے کہ کسی بھی مسئلے کو باہمی تعاون سے حل کیا جا سکتا ہے۔ اسی یقین کی بنیاد پر انہوں نے اپنا کام شروع کیا۔ ان کا خیال تھا کہ سماجی کاموں میں پہلا مقصد بنیادی ضروریات کو پورا کرنا ہونا چاہیے۔ بنیادی ضروریات جیسے سڑک اور پانی جزوی طور پر حکومت کی طرف سے فراہم کی جاتی ہے، لیکن بہت سے غریب خاندانوں کے پاس اب بھی بجلی کے کنکشن یا بل ادا کرنے کے لیے پیسے نہیں ہیں، اور وہ تاریکی میں رہتے ہیں۔

جاوید نے ذہن سازی شروع کر دی کہ اس مسئلے کا حل کیسے نکالا جائے۔ انہوں نے سوچنا شروع کیا کہ کم خرچ میں زیادہ لوگوں کے لیے اس مسئلے کو کیسے حل کیا جائے۔ انہوں نے اس بات پر تحقیق شروع کی کہ کیا اس تاریکی کو غیر روایتی توانائی کی مدد سے دور کیا جا سکتا ہے۔ کافی غور و خوض اور تحقیق کے بعد وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ شمسی توانائی ایک بہتر آپشن ہو سکتی ہے۔ کافی غور و خوض اور تحقیق کے بعد وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ اگر گھر میں سولر پینل لگا دیے جائیں تو تاریک کمروں کو بھی روشنی مل سکتی ہے۔ جاوید نے ضرورت مندوں کے گھروں میں شمسی توانائی فراہم کرنے کا عہد کیا۔ انہوں نے اپنے محلے سے شروع کرنے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے فیصلہ کیا کہ ایسے خاندانوں کو ترجیحی بنیادوں پر بجلی فراہم کرنے کی ضرورت ہے جن میں کوئی مرد کام کرنے والا نہیں یا کوئی معذور شخص ہے۔

ابتدائی طور پر، انہوں نے دس ضرورت مند خاندانوں کو منتخب کرنے اور انہیں سولر پینل دینے کا فیصلہ کیا۔ ماحول دوست بجلی فراہم کرنے کا ان کا ارادہ سولر سسٹم کی مدد سے پورا ہونا تھا۔ وہ بغیر بجلی کے گھروں میں رہنے والوں کی مشکلات کو بھانپ چکے تھے۔ اس کی وجہ سے انہوں نے تمام ضرورت مندوں کو بغیر کسی ذات پات اور مذہب کی تفریق کے بجلی فراہم کرنے کا عزم کیا۔ انہوں نے ایک سولر پینل کا انتخاب کیا جو ایک ہی چارج پر آٹھ گھنٹے تک بجلی فراہم کرتا ہے۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ اس پینل کی مدد سے پنکھے اور موبائل کو چارج کیا جا سکتا ہے۔ جاوید کی جدوجہد نے ان لوگوں کے گھروں اور زندگیوں میں روشنی بکھیری جن کی نسلیں تاریکی میں گزر بسر کر رہی تھیں۔ یوسف فاؤنڈیشن کے ذریعے انہوں نے تاریک گھروں میں سولر لائٹس لگوا کر وہاں رہنے والوں کے چہرے روشن کر دیے۔ سولر کے بارے میں عوامی شعور کی کمی کی وجہ سے لوگ بار بار پوچھتے تھے کہ کیا واقعی بجلی ملے گی؟ لیکن جاوید اور ان کی ٹیم کے لگائے گئے سولر پینلز سے اندھیرے گھر میں روشنی پھیلی تو لوگ جذباتی ہو گئے۔

آس پاس کے لوگ جاوید کو اللہ کا بندہ کہہ کر پکارنے لگے۔ سماجی ذمہ داری کو مدنظر رکھتے ہوئے یوسف فاؤنڈیشن نے ایک اور بہترین اقدام کیا۔ پونے کا شمار دنیا کے مصروف ترین شہروں میں ہوتا ہے۔ یہاں کی سڑکوں پر پڑے گڑھے کئی لوگوں کی جان لے چکے ہیں۔ بارش کے موسم میں گڑھوں کا مسئلہ اور بھی جان لیوا ہو جاتا ہے۔ اس بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے، یوسف فاؤنڈیشن نے جدید ٹیکنالوجی 'کولڈ مکس' کی مدد سے پونے کی کئی مصروف سڑکوں پر گڑھے بھرنے کی پہل کی۔ اس سے کئی جانیں بچ گئیں۔ ان کے اس اقدام کو بہت سراہا گیا۔ جاوید نے یوسف فاؤنڈیشن کے مستقبل کے منصوبوں کے بارے میں پرجوش معلومات دیں۔

awaz

ان کا کہنا ہے کہ موجودہ دور میں ماحولیات کو نظر انداز کیا جا رہا ہے اس لیے مستقبل میں بھی ہم یوسف فاؤنڈیشن کی جانب سے ماحول دوست کام کرنے میں اپنا یوگدان دیتے رہیں گے۔ کورونا کے دوران بھی جاوید نے یوسف فاؤنڈیشن کے ذریعے بڑے پیمانے پر سماجی کام کیا۔ اس دوران انہوں نے ضرورت مندوں میں ماسک، خوراک اور پانی جیسی ضروری اشیاء بڑی مقدار میں تقسیم کیں۔ اعظم کیمپس کالج آف آرٹس، پونے اور یوسف فاؤنڈیشن کے اشتراک سے یتیم بچوں کے لیے ایک مقابلے کا انعقاد بھی کیا گیا۔

جاوید خود ان پروگراموں کے لیے فنڈز اکٹھا کرتے ہیں۔ اس کے لیے جاوید اپنی کمائی کا کچھ حصہ سماجی کاموں کے لیے الگ رکھتے ہیں۔ وہ یقین رکھتے ہیں کہ خدا کے ہم مقروض ہیں۔ اور یہ احسان خدا کے بندوں کی خدمت کر کے ہی ادا کیا جا سکتا ہے۔ جاوید کی معاشرے کے تئیں سنجیدگی اور کام کے تئیں ان کا جوش ہم سب کے لیے ایک مثال ہے۔ جس سے ہمیں یہ درس ملتا ہے کہ اگر ہم چاہیں تو اپنے علم و فن کے ذریعے لوگوں کی بڑی خدمت کر سکتے ہیں۔