ولی رحمانی جنہوں نے امید اکیڈمی کے خواب کو حقیقت میں بدل دیا۔

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 3 Months ago
ولی رحمانی جنہوں نے امید اکیڈمی کے خواب کو حقیقت میں بدل دیا۔
ولی رحمانی جنہوں نے امید اکیڈمی کے خواب کو حقیقت میں بدل دیا۔

 

کلیم عظیم، پونے

 ولی رحمانی ایک 25 سالہ بنگالی نوجوان ہیں۔ کولکتہ میں رہتے ہیں۔ ہندوستان کے لوگ انہیں ایک سیاسی تجزیہ کار اور مبصر کے طور پر جانتے ہیں۔ صرف 17 سال کی عمر میں وہ عوامی خطیب کے طور پر دنیا بھر میں مشہور ہو گئے۔ ان کا مطالعہ، پیشکش، تجزیہ، دلائل سننے والوں کو مسحور کردیتے ہیں۔ بنگالی، ہندی، اردو اور انگریزی پر عبور رکھنے والا یہ نوجوان مین اسٹریم میڈیا کے بڑے نیوز چینلز پر پرائم ٹائم مباحثوں میں فاشسٹ طاقتوں، فرقہ واریت، سیکولرازم اور سماجی ہم آہنگی پر موثر انداز میں بات کرتا ہے۔ ان کی تقریریں یوٹیوب، سوشل میڈیا اور واٹس ایپ پر وائرل ہوتی ہیں۔ ان سب سے ہٹ کر اب وہ تعلیمی میدان میں بہت اہم کام کر رہے ہیں۔

اپنی مقبولیت کے ساتھ ساتھ انھوں نے انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا کو تخلیقی کاموں کے لیے بھی استعمال کیا۔ بیس سال کی عمر میں اس نے کولکتہ شہر میں یتیموں کے لیے ایک رہائشی ااسکول کی بنیاد رکھی۔ اس کے ااسکول کی ویٹنگ لسٹ میں تقریباً 1500 طلبہ ہیں۔ لیکن مناسب وسائل اور جگہ کی کمی کی وجہ سے وہ ان کا داخلہ نہیں کر پا رہے ہیں۔ اس کے لیے اس نے مجوزہ ااسکول کا بلیو پرنٹ پیش کیا اور عوام سے پیسے مانگے۔ اس نے سب سے صرف 100 روپے مانگے۔ انہوں نے اعلان کیا کہ اگر میری اپیل 10 لاکھ لوگوں تک پہنچ جائے تو 10 کروڑ روپے آسانی سے اکٹھے ہو جائیں گے۔ حیران کن بات یہ ہے کہ اس نے صرف چھ دنوں میں 6,00,00,000 (چھ کروڑ) روپے کے فنڈز اکٹھے کر لیے۔انہوں نے یہ فنڈ 15 ستمبر 2023 سے 20 ستمبر 2023 تک پانچ دنوں کے دوران جمع کیا ہے۔ ان کی تعلیم، پرورش، کیریئر اور تخلیقی کام اور نقطہ نظر کو سمجھنے کے لیے یہ انٹرویو بہت اہم ہے۔

ولی رحمانی، ہماری طرف سے… ’امید اکیڈمی‘ اور آپ کی ٹیم کو مبارک ہو… آپ نے صرف چھ دنوں میں بیت المال سے تقریباً چھ کروڑ روپے اکٹھے کر لیے ہیں۔ آپ نے تربیت کے لیے لوگوں سے پیسے مانگے تو انہوں نے کھلے دل سے مدد کی۔ آپ نے تصور سے بالاتر کام کیا ہے۔ کچھ لوگ تھے جنہیں آپ کی پہل پسند نہیں آئی...کئی لوگوں نے آپ کو ٹرول بھی کیا۔ آپ پر تنقید کی۔ ...

awazurdu

سوال : تنقید یا ٹرولنگ آپ کے لیے نئی بات نہیں ہوگی۔ آپ ان تمام حالات سے کیسے نمٹتے ہیں؟

ولی رحمانی: دراصل آپ ٹھیک کہتے ہیں۔ یہ میرے لیے نیا نہیں ہے۔ کچھ دن پہلے فیس بک پر میرے ذہن سے ایک بات نکلی۔ میں ایک انسان ہوں، کبھی کبھی میری زبان سے اچھی یا بری باتیں نکل سکتی ہیں۔ اگر غلطی سے کوئی ایسی بات سامنے آجائے جس سے لوگوں کے جذبات مجروح ہوں... میرے ساتھ بھی ایسا ہی ہوا۔ جس کی وجہ سے لوگوں کے جذبات مجروح ہوئے۔ وہی لوگ جو میری شہرت پر تالیاں بجاتے تھے، میری کامیابی پر خوش ہوتے تھے اور میری باتوں پر تالیاں بجاتے تھے، مجھے ٹرول کرنے لگے تھے۔ اس نے مجھے اتنا پریشان کیا کہ میں ڈپریشن میں چلا گیا۔میری ایک خاتون دوست تھی۔ انہوں نے مجھے ایک بڑا آئینہ دکھایا۔ اس وقت انہوں نے کہا کہ تم اداس کیوں ہو؟ میں نے کہا یہ لوگ مجھے گالی دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا، ’’یہ بات ساری زندگی یاد رکھی جائے گی۔ آپ ان کی تالیاں بجانے پر خوش ہوئے۔ اس لیے آج آپ ان کی تالیوں سے خوش نہ ہوتے اور صرف اپنے کام پر توجہ ان کی گالیوں کا بھی آپ پر کوئی اثر نہ ہوتا۔ ان کے الفاظ میرے لیے بہت بڑا سبق تھے۔ اس کے علاوہ جو میری تعریف کرے اور جو مجھے گالی دے اس سے مجھ پر کوئی فرق نہیں ہونا چاہیے۔ کوئی واویلا کرے تو ٹھیک ہے، کوئی گالی بھی دے تو ٹھیک ہے۔ مجھے صرف اپنے کام کی فکر ہے۔ اس دن سے آج تک اس کا یہی حال رہا ہے کہ اگر کوئی میری تعریف کرے تو اس کا میرے دل پر گہرا اثر نہیں پڑتا، کوئی تالیاں بجاتا ہے یا گالی دیتا ہے، اس سے مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا۔

سوال:  آج کے سب سے ایک بڑے یوتھ آئیکون ولی رحمانی کہاں پیدا ہوئے، آپ کا بچپن کیسا رہا اور آپ نے اپنی تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

جواب: یوتھ آئیکون کہلانا بڑی بات ہے۔ آپ نے میرے لیے بہت بڑے الفاظ کہے ہیں۔ میں ایک عام آدمی ہوں۔ کام کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ میں کوشش کرتا ہوں کہ جو کچھ میرے اختیار میں ہے وہ کروں۔ میں 1998 میں کولکتہ شہر میں پیدا ہوا۔ میں نے اپنی ااسکولنگ 'سینٹ جیمز ااسکول' سے کی۔ یہاں میں نے دسویں جماعت تک تعلیم حاصل کی۔ اس کے بعد، اس نے 11 ویں اور 12 ویں 'جینیسس گلوبل ااسکول'، نوئیڈا میں کیا، جو ایک بین الاقوامی ااسکول ہے۔ میں نے ’’جامعہ ہمدرد یونیورسٹی‘‘ سے قانون کی تعلیم مکمل کی ہے۔ صرف 4 ماہ قبل میں نے اپنی تعلیم مکمل کی اور اب میں گریجویشن کر چکا ہوں۔

سوال: آپ جس خاندانی پس منظر سے آئے ہیں، اس میں ہر چیز کو حاصل کرنے کے لیے آپ کو محنت کرنی پڑتی ہے، اس دوران آپ نے اپنی الگ شناخت بنانے کے لیے کیا تیاری کی؟

جواب: جیسا کہ لوگ کہتے ہیں، ایسا نہیں تھا۔ میرے والد شفیع الدین صاحب نے ایک بڑے کاروبار اور امپائر قائم کرنے کے لیے بہت محنت کی ہے۔ ان کی محنت اور غربت کا دور میری پیدائش سے پہلے کا تھا۔ جس سال میں میں پیدا ہوا وہ سال ہے۔ میرے والد کا تعلق بہار کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے تھا۔ 1980 میں وہ روزگار کی تلاش میں گاؤں سے کولکتہ شہر آئے۔ اسے پہلی نوکری ہاتھ کارکشہ چلانا تھی۔ وہ چمڑے کا سامان رکشوں پر لاد کر ایک فیکٹری سے دوسری فیکٹری پہنچاتےتھے ۔ انہوں نے اپنے غریبی کے دنوں میں بہت محنت کی۔ میری پیدائش تک ان کے حالات بہتر ہو چکے تھے۔ گھر میں خوشی کا سماں تھا۔ میں نے کبھی غربت نہیں دیکھی۔ میرے والد نے مجھے بہترین ااسکول میں پڑھنے کے لیے بھیجا تھا۔ لیکن والد صاحب اکثر بتایا کرتے تھے کہ غربت کیا ہے؟ انہوں نے کیا دیکھا؟ وہ ہمیں محنت اور کوشش کے لیے تیار کرتے تھے۔ ہم نے ہمیشہ ان سے سنا کہ انہیں کیا کچھ برداشت کرنا پڑا۔ ہم بھائیوں کو پتہ چل گیا کہ غربت، بے روزگاری، فاقہ کشی کیا ہوتی ہے، بھوکا رہنے کا احساس کیا ہوتا ہے۔ یہ سب باتیں ان سے سنی تھیں۔

awazurdu

سوال: 2017 میں آپ کی پہلی یوٹیوب ویڈیو وائرل ہوئی تھی۔ خیال کیسے آیا؟

جواب: میں نے وہ ویڈیو اس وقت بنائی تھی جب میں گیارہویں سے بارہویں میں تھا۔ اس وقت میں اتر پردیش میں پڑھتا تھا۔ وہاں کی بدلتی ہوئی سیاسی صورتحال مجھے پریشان کر رہی تھی۔ دل میں خوف اور اندھیرا تھا۔ مذہب کے نام پر کی جانے والی سیاست محنتی، غریب اور بے سہارا لوگوں کے خواب چکنا چور کرتی نظر آتی ہے۔ مجھے بہت برا لگ رہا تھا۔ اور یہی پریشانی اور درد میری سب سے بڑی طاقت بن کر ابھرا۔ اس کے علاوہ میں نے کوئی خاص تیاری نہیں کی تھی۔ دل میں غریبوں اور ناداروں کے لیے درد تھا۔ ایک ہی درد کا اظہار کیا، بس!

سوال: ابتدائی دنوں میں آپ سیاسی رہنما بننا چاہتے تھے۔ آپ نے کم عمری میں ہی اپنے ارادے کا اعلان کر دیا تھا۔ تھوڑے ہی عرصے میں آپ نے سیاسی سنجیدگی حاصل کر لی ہے۔ 

جواب: ایک وقت تھا جب مجھے لگتا تھا کہ سیاست میں آ کر ملک کی حالت بہتر کی جا سکتی ہے۔ میں نے محسوس کیا کہ لیڈر بن کر قیادت میں آکر اور سیاست میں آکر میں کچھ کر سکوں گا۔ یہی وجہ تھی کہ میں مباحثوں میں جاتا تھا۔ نیوز چینل کی اہم بحث کا حصہ ہوا کرتا تھا۔ سیاست پر بات کرتے تھے۔ ایک وقت تھا جب میں غصے سے کہتا تھا کہ میں 2040 میں ملک کا وزیراعظم بننا چاہتا ہوں۔ میری کئی تقریریں ریکارڈ پر ہیں۔ لوگ میری بات سن کر زور زور سے تالیاں بجاتے تھے۔ انہیں حوصلہ دیا جاتا تھا کہ کوئی 20 سال کا لڑکا کھڑا ہو کر کہہ رہا ہے کہ وہ وزیراعظم بننا چاہتا ہے۔ میرے لیے بھی بڑی حوصلہ افزا باتیں ہوا کرتی تھیں۔ لیکن اب میرے خیالات بدل چکے ہیں۔ اب صورتحال ایسی نہیں ہے۔ قیادت کی تعریف بدل گئی ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ لوگ اپنی زندگی میں نئے خیالات کو شامل کرتے ہیں۔ مختلف انداز میں سوچنے لگتا ہے۔ جب سوچ کا عمل بڑھتا ہے تو وہ سمجھنے لگتا ہے کہ یہ سوچ ٹھیک نہیں تھی۔ مجھے اس طرح نہیں سوچنا چاہیے تھا، مجھے اس طرح سوچنا چاہیے تھا۔ اور پھر میں اسی طرح سوچنے لگا۔ مجھے اس کا احساس ہوا اور میرے لیے قیادت کی تعریف بدل گئی۔

قیادت کی تعریف یہ ہے کہ کوئی شخص خود کہے کہ وہ لیڈر ہے۔ میری نظر میں وہ سب سے بڑا جھوٹا ہے۔ جو خود کہتا ہے کہ وہ لیڈر بننا چاہتا ہے، اسے ہرگز لیڈر نہ بنائیں۔ لیڈر کبھی نہیں کہہ سکتا کہ مجھے لیڈر بننا ہے۔ اس کے دل میں یہ خواہش کبھی نہیں ہونی چاہیے کہ وہ لیڈر بننا چاہتا ہے۔

اس کی صرف ایک خواہش ہونی چاہیے کہ اسے قائدانہ معیار حاصل کرنا ہے۔ اس کی بڑی خوبی یہ ہے کہ آپ ایک اچھے انسان کا درجہ حاصل کرتے ہیں۔ آپ کمال حاصل کرتے ہیں۔ آپ جو بھی کام کریں اس میں کامل رہیں۔ آپ کمال کی اعلیٰ سطح پر ہوں ۔ دوم یہ خدمت! یہ صرف دو چیزیں ہیں۔ آپ جو کام کر رہے ہیں اس میں آپ سے زیادہ خدمت کسی اور نے نہیں کی۔ لوگوں کی خدمت اس طرح کرو کہ تم سے زیادہ ان کی خدمت کسی نے نہ کی ہو۔ اگر آپ کے پاس یہ دو چیزیں ہیں تو آپ لیڈر بن سکتے ہیں۔ پھر آپ کو یہ کہنے کی ضرورت نہیں پڑے گی کہ میں لیڈر بننا چاہتا ہوں۔ اپنے اندر کوئی خواہش رکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔ لوگ خود آپ کے پاس آئیں گے اور کہیں گے کہ یہ ہمارا لیڈر ہے۔ میں وقت پر سمجھ گیا۔ میں نے محسوس کیا کہ بچپن میں جو سوچا تھا کہ میں وزیر اعظم بننا چاہتا ہوں وہ ٹھیک نہیں تھا۔ میں وزیر اعظم نہیں بننا چاہتا۔ میں لوگوں کی خدمت کرنا چاہتا ہوں۔ مجھے اپنے کام میں بہترین بننا ہے اور میں جو کام کر رہا ہوں اس کے ذریعے لوگوں کی سب سے زیادہ خدمت کرنا ہے۔ مجھے سب سے زیادہ خدمت کرنی ہے، جب میں یہ کروں گا تو لوگ آئیں گے اور کہیں گے کہ آپ ہمارے لیڈر ہیں۔ اور اگر نہ کہو تو کوئی فرق نہیں پڑتا، میں خدمت کرتے ہوئے اس دنیا سے چلا جاؤں گا۔

awazurdu

سوال: آپ کی بحثوں کا لوگوں پر بہت اثر ہوتا ہے۔ ہر بیان میں اچھی خاصی کتابوں کا ذکر ہے۔ اپنے روزمرہ کے مصروف شیڈول کے باوجود، آپ کتابیں پڑھنے کے لیے کتنا وقت نکال پاتے ہیں؟

جواب: میرے خیال میں آپ میری پرانی ویڈیوز کی بات کر رہے ہیں۔ وہ وہاں تین ساڑھے تین سال سے ہے۔ میں اب کافی عرصے سے بحث میں نہیں گیا ہوں۔ یہ پرانی باتیں ہیں۔ اب میں بہت دور آیا ہوں۔

سوال: یہ سوال اس لیے بھی اہم ہے کہ آپ کی بحثیں اور بیانات کافی وائرل ہوتے ہیں۔ لوگ آپ کو بڑی دلچسپی سے سنتے ہیں۔ آئیے اسے آگے بڑھاتے ہیں۔

جواب: میں بہت سے پروگراموں میں جاتا ہوں۔ لوگ پیار کتے ہیں۔ یہ میرے لیے لوگوں کی محبت اور پیار ہے۔ میری تقاریر ضرورت کے مطابق کی جاتی ہیں۔ میں اس کے لیے پڑھتا ہوں۔ میں روزانہ ایک سے ڈیڑھ گھنٹہ نکالتا ہوں۔ کتابوں کے علاوہ میں بھی بہت پڑھتا ہوں۔ میں نوٹ نکالتا ہوں۔

سوال: آپ انٹرنیٹ پر کافی وائرل ہیں اور بہت کم وقت میں سوشل میڈیا پر اثر انداز ہو گئے ہیں۔ آپ کے 10 لاکھ سے زیادہ فالوورز ہیں، آپ کو کم عمری میں اتنی شہرت ملنے پر کیسا لگتا ہے؟

جواب: ابتدائی مرحلے میں بہت مزہ آیا۔ شہرت کس کو پسند نہیں؟ ہم بھی انسان ہیں اور شہرت سب کو پسند ہے۔ ہر کوئی شہرت کی خوشی میں ڈوب جاتا ہے اور اگر کسی کو چھوٹی عمر میں مل جائے تو انسان کے گمراہ ہونے کے امکانات بہت زیادہ ہوتے ہیں۔ وہ شہرت کو سب کچھ سمجھتا ہے۔ اس کے لیے شہرت سب کچھ بن جاتی ہے۔ لیکن خدا نے مجھے بالکل صحیح وقت پر مارا۔ خدا نے مجھے ہر موقع پر بتایا کہ مجھے جو شہرت ملی ہے وہ عارضی ہے۔ یہ چند دنوں کا مہمان ہے اس کا کوئی فائدہ نہیں ہونے والا۔ آخر میں، چاہے یہ آپ کا کام ہو یا خدمت، یہ مفید رہے گا۔ آپ کے کام سے فائدہ ہوگا۔ کام آخر میں آپ کے لئے مفید ہو گا. جب میں خدا سے ملوں گا تو میری شہرت اس کے کام نہ آئے گی۔ میں نے دنیا میں کون سے فلاحی کام کیے ہیں؟ آپ نے کیا کیا، آپ نے کیا خدمت کی، آپ نے دوسروں کی خوشی کے لیے کیا قربانیاں دیں؛ یہ وہی ہے جو مفید ہو گا. یہی وجہ تھی کہ بہت کم وقت میں شہرت حاصل کرنے کے باوجود میں صحت یاب ہونے میں کامیاب ہوگیا۔ اور شہرت میں بہہ جانے کے بجائے تعمیری کام کرنے لگے۔

awazurdu

سوال: موجودہ سیاست کے حوالے سے آپ کی کھل کر رائے ہے، آپ ٹوئٹر پر کھل کر لکھتے اور بولتے ہیں۔ بی جے پی کی نفرت کی اس سیاست میں مسلمانوں کو قوم کی تعمیر میں کیا کردار ادا کرنا چاہیے؟

جواب: ہندوستان میں جو اسلام پھیلا ہے وہ صرف مسلمانوں کے کردار کی بنیاد پر پھیلا ہے۔ یہ خانقاہوں کے ذریعے پھیل چکا ہے۔ قرون وسطیٰ میں بہت سے صوفی بزرگ ہمارے ہاں آئے۔ انہوں نے اپنے کردار کی ایک شاندار مثال پیش کی جس کی وجہ سے لوگ اسلام کو جاننے لگے۔ اسے سمجھنے لگا۔ ذات پات، امتیازی سلوک اور اچھوت سے پریشان لوگ صوفیاء کے اچھے کردار کی طرف کھنچے چلے گئے۔ ہمارے بزرگوں کے کردار کی وجہ سے لوگ اسلام قبول کرتے تھے۔ پھر مسلمانوں کو اپنے کردار کو صاف ستھرا اور بے لوث رکھنا چاہیے۔ اپنے کردار کے بل بوتے پر لوگوں کے دل جیتنے کی کوشش کریں۔

دوسرے یہ کہ مسلمان کو دینے والا بننا جائیے۔ آج اس ملک میں مسلمانوں کا ایک بڑا طبقہ لینے والا بن چکا ہے۔ اگر میں یہ کہوں کہ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت ہمیں 'ٹیکرز' بنا دیا گیا ہے تو برا نہیں ہے۔ ہمیں منظم طریقے سے اس دہانے پر لایا گیا ہے۔ ہمیں ایک سازش کے تحت روکا جا رہا ہے۔ بہت سے مطالعات اور رپورٹیں یہ ظاہر کرتی ہیں۔

ہمارے لیے یہ ضروری ہے کہ اب ہم سمجھ گئے کہ ہمیں دینے والے بننا چاہیے۔ جس دن ہم دینے والے بن جائیں گے، دنیا ہماری عزت کرے گی، ملک ہماری عزت کرے گا۔ آئیے ہم ان کے لیے دینے والے بنیں جو ہم سے نفرت کرتے ہیں۔ یعنی ملک کے بہترین ڈاکٹر مسلمان بنیں، بہترین سائنسدان مسلمان بنیں، بہترین ااسکول مسلمانوں کے ہوں، بہترین کالج مسلمانوں کے ہوں، بہترین اسپتال مسلمانوں کے ہوں۔ کیا ہمارے بزرگوں نے ملک کی تعمیر کے لیے کچھ نہیں کیا؟ لیکن آج ہم کیا کر رہے ہیں؟ ملک کی پیداواری صلاحیت میں ہمارا کیا حصہ ہے؟ یعنی اگر ہم دینے والے بن جائیں تو ان کے پاس نفرت کا کوئی آپشن نہیں بچے گا۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ ہمارے منہ سے نکلنے والا ہر لفظ لوگوں کے دل جیت لے۔

سوال: آج کے سیاسی دور میں بگڑتے سیاسی کلچر کے بارے میں بہت بحث ہو رہی ہے، آپ اس سیاست کو کس نظر سے دیکھتے ہیں؟

جواب: اگر آج کی سیاست کی بات کریں تو یہ انتہائی تکلیف دہ صورتحال ہے۔ سیاسی جماعتوں کے دعوؤں اور ان کے فریب کی وجہ سے عام لوگ بھی اپنے آپ کو بھول رہے ہیں۔ ہم ہر روز ٹی وی مباحثوں میں دیکھ رہے ہیں کہ کیا ہو رہا ہے۔ وہاں کھڑکی میں بیٹھے افراد کا تعلق مختلف سیاسی جماعتوں سے ہے۔ آپ نے اسے بحث کے بعد بھی کبھی لڑتے اور جھگڑتے نہیں دیکھا ہوگا۔ میں خود وہاں گیا ہوں اور یہ سب اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے۔ بحث کے دوران کسی بھی سیاسی جماعت کے ترجمان ڈیڑھ گھنٹے تک مسلسل لڑتے ہیں۔ ان کو دیکھ کر ایسا لگتا تھا جیسے وہ ایک دوسرے کے کھلے ہوئے دشمن ہیں۔ لیکن جب بحث ختم ہوتی ہے تو وہ ایک دوسرے کے ساتھ چائے پیتے نظر آتے ہیں۔ ہنستے ہیں۔ وہ جانتے ہیں کہ ان کی رینج کیا ہے۔ وہ جانتے ہیں کہ کہاں بحث کرنی ہے۔ لیکن جو لوگ اس کے پیروکار بنے ہیں ان کو ابھی تک اس کا علم نہیں ہوا۔ سیاسی لیڈروں کو دیکھ کر افہام و تفہیم میں زہر گھول رہے ہیں اور غلط معلومات پھیلا رہے ہیں۔ ہوا یہ ہے کہ عام لوگ خود کو وطن سمجھنے کے بجائے خود کو سیاسی لیڈر سمجھنے لگے ہیں۔ ہمارے ملک میں جتنے سیاسی جماعتیں ہیں اتنے ہی کیمپ ہیں۔ یہ بہت تکلیف دہ ماحول ہے۔ جسے صرف محبت سے ہی دور کیا جا سکتا ہے۔ نفرت کی قوتوں کو شکست دے کر ہی اس کی اصلاح کی جا سکتی ہے۔

awazurdu

سوال: ان دنوں آپ کے مشاغل کیا ہیں؟

جواب: ایک وقت ایسا آیا جب مجھے لگا کہ مباحثوں وغیرہ میں حصہ لے کر میں بڑا نام اور شہرت حاصل کر رہا ہوں۔ اگر وہ وہیں رہتے تو اب تک کسی نہ کسی سیاسی جماعت میں شامل ہو چکے ہوتے۔ اسے جاری رکھا ہوتا۔ ان سے بھی کچھ ٹکٹ مل جاتے۔ شاید میں اپنے سیاسی کیرئیر میں بہت آگے بڑھ چکا ہوتا۔ لیکن میں نے محسوس کیا کہ زمینی سطح پر کوئی کام نہیں ہوا ہے۔ میں زمینی سطح پر کوئی تبدیلی لانے کے قابل نہیں ہوں۔ اور میرا درد یہ تھا کہ مجھے غربت سے لڑنا ہے، مجھے غریبوں کے لیے لڑنا ہے۔ اس کے لیے کچھ نہیں ہو رہا تھا۔ چنانچہ میں نے اپنا ایک ااسکول شروع کیا۔ میرا مقصد امیروں کی تعلیم غریبوں تک پہنچانا تھا۔ اس وقت میں وہ اسکول چلا رہا ہوں۔ میرے ساتھ 300 بچے پڑھتے ہیں۔ جسے میں نے گود لیا ہے۔ ان میں سے 20 فیصد بچے یتیم ہیں اور 60 فیصد کے والدین نہیں ہیں۔ اور باقی بہت غریب ہیں۔ سب بچے مجھے 'ابا جی' کہتے ہیں اور مجھے باپ کی طرح دیکھتے ہیں۔ میں ان بچوں کی پرورش کر رہا ہوں۔ میں اپنا سارا وقت ان بچوں کی پرورش اور پرورش کے لیے وقف کر رہا ہوں۔ میں ان کے بارے میں پڑھتا اور لکھتا ہوں۔ مزید 1500 بچے ہیں جو انتظار کی فہرست میں ہیں، جو میرے ااسکول میں شامل ہونا چاہتے ہیں۔ لیکن میرے ااسکول میں جگہ نہیں ہے، انفراسٹرکچر نہیں ہے۔ لہذا ہم نے 24 پرگنہ ضلع میں 2 ایکڑ زمین لی ہے۔ اس پر اسکول کی عمارت تعمیر کی جا رہی ہے۔ رہائشی ااسکول کیمپس کی تعمیر۔ فٹ بال، والی بال اور باسکٹ بال کورٹس ہوں گے۔ یہاں ہم امیروں کی تعلیم غریبوں کو دے سکتے ہیں، انشاء اللہ۔

سوال: آپ کو تعلیم کی اس سماجی خدمت میں کس چیز نے دلچسپی پیدا کی، کیا وجہ تھی، کون سا لمحہ تھا، جس نے آپ کو اس شعبے کی طرف راغب کیا؟

جواب: اس کی چار پانچ وجوہات ہیں۔ لیکن دو بہت اہم ہیں، جو واقعی میرے لیے حوصلہ افزائی کے طور پر ابھرے۔ ایک تو، جب میں ااسکول میں پڑھتا تھا، وہاں میری ایک ٹیچر تھی، لینی لیسیور! یہ میری 11ویں اور 12ویں کلاس کی ٹیچر تھی، انہوں نے 25 سال تک یتیم خانے میں خدمات انجام دیں۔ جب ریٹائرمنٹ کا وقت آیا تو اسے لگا کہ اسے کچھ پیسوں کی ضرورت ہے۔ اس کے بعد وہ انٹرنیشنل ااسکول آگئیں۔ جس سال انہوں نے ااسکول جوائن کیا، اس نے صرف 6 ماہ بعد ہی ااسکول چھوڑ دیا اور واپس اپنے یتیم خانے چلی گئی۔ اس کے عزم نے دل میں فکر اور درد پیدا کیا۔ دوسری وجہ حکیم حافظ عبدالمجید (1908-1999) ہیں۔ وہ ’ہمدرد میڈیکل‘ پروڈکٹ کے کمپنی مالک تھے۔ انہوں نے اپنی کمائی سے کروڑوں روپے لگا کر 'ہمدرد یونیورسٹی' بنائی ہے۔ میں نے اسی یونیورسٹی میں قانون کی تعلیم مکمل کی ہے۔ حکیم صاحب ارب پتی آدمی تھے۔ اس سے ملنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ اس کے کپڑے دو تین جگہ سے پھٹے ہوئے تھے۔ اوپری حصے مختلف کپڑوں کے پیوندوں سے ڈھکے ہوئے تھے۔ ہمیشہ ایک جیسے کپڑوں میں نظر آتے ہیں۔ میں نے اپنے قریبی لوگوں سے اس کے بارے میں بہت کچھ سنا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ جب کوئی نیا شخص اسے دیکھتا ہے تو اسے لگتا ہے کہ وہ کوئی خستہ حال انسان ہوں، ایسا لگتا ہے کہ اس سے بڑا غریب شاید ہی کوئی ہو۔ اس نے اپنی ساری کمائی ملک، کمیونٹی کی خدمت اور ان کی تعلیم پر لگا دی۔ انہوں نے ہزاروں کروڑ روپے خرچ کر کے مسلمانوں کے لیے اتنا بڑا ادارہ بنایا۔ اپنی پوری زندگی ملک اور سماجی کاموں کے لیے صرف کی۔ ارب پتی ہونے کے باوجود غریب اور بے سہارا رہے لیکن ایک پرتعیش تعلیمی ادارہ بنایا۔ میں یونیورسٹی میں کسی ایسے شخص کے ساتھ رہا جس کو وہ جانتے تھے۔ ان سے ہمیں حکیم صاحب کے کردار کا علم ہوا۔ جس کی وجہ سے میں بہت اداس ہو گیا۔ اس کی سادہ طبیعت میرے لیے کارگر ثابت ہوئی۔ میں نے محسوس کیا کہ مجھے ملک کی خدمت کے لیے خود کو قربان کرنا پڑے گا تاکہ دوسروں کی زندگیوں میں بہتری آسکے۔

سوال: امید اکیڈمی کا خیال کب اور کیسے وجود میں آیا؟

 جواب: میں2018  میں جینیس گلوبل ااسکول سے 12ویں کلاس سے پاس آؤٹ ہوا۔ ان دنوں یہ ایک بحث کا حصہ ہوا کرتا تھا۔ وہ ادھر ادھر جا کر بیانات دیتے تھے۔ ان دنوں میں نے محسوس کیا کہ ملک میں بہت غربت ہے۔ غریبوں کو دیکھ کر میں نے سوچا کہ یہ ایسے کیوں ہیں؟ کیونکہ انہیں غربت میں رکھا جا رہا ہے، وہ بے سہارا ہیں۔ میں نے دیکھا کہ ملک بھر میں بڑے پیمانے پر خیراتی کاروبار چل رہا ہے۔ جو غیر مسلم ہیں وہ خیرات کا کاروبار کر رہے ہیں اور جو مسلمان ہیں وہ زکوٰۃ کا کاروبار کر رہے ہیں۔ ہم نے ہر سال صدقہ کرنا ہے، نیکی کمانی ہے، ثواب کمانا ہے۔ خیرات سے کون فائدہ اٹھا رہا ہے؟ اس سے لوگوں کو کوئی فرق نہیں پڑتا۔ یعنی ہم کسی غریب کے پاس جائیں گے اور اسے کمبل دیں گے۔ اگلے سال وہ پھر آئے گا اور ہم اسے دوبارہ کمبل دیں گے۔ اس کے بعد وہ دوبارہ آئے گا اور اسے دوبارہ کچھ دے گا۔ ایسے ہی کوئی فقیر آ کر کھانا مانگتا ہے۔ ہم اسے کھانا دیتے ہیں۔ وہ پھر کھانا مانگنے آتا ہے۔ وہ دوسرے دن پھر آیا اور اسے کچھ دیا۔ چنانچہ اسی طرح میرے والد نے اس غریب کے والد کو رقم دی جس کو میں پیسے دے رہا ہوں۔ ان کے دادا کو میرے دادا نے پیسے دیے تھے، ان کے پردادا کو میرے پردادا نے پیسے دیے تھے۔ یہ کئی نسلوں سے چل رہا ہے۔

ہمارے ملک میں غریب 20 سے 30 فیصد ہیں۔ یہ سب غربت کی لکیر سے نیچے ہیں۔ یہ ہمارے لیے شرم کی بات ہے کہ آزادی کے 75 سال بعد بھی ہم حالات کو نہیں بدل سکے۔ یہ لوگ راتوں رات غریب نہیں ہو گئے۔ یہ لوگ کئی نسلوں سے غریب ہیں۔ ان کے دادا بھی غریب تھے، پردادا بھی غریب تھے، پردادا بھی غریب تھے۔ کون جانے کتنی نسلوں، کتنی نسلوں کے بعد یہ لوگ غربت کی زندگی گزار رہے ہیں۔ میں سمجھ گیا کہ انہیں غربت سے نکالنے کا واحد طریقہ انہیں اچھی تعلیم دینا ہے۔
اگر میں انہیں کھانا دیتا ہوں تو وہ اگلے دن دوبارہ پوچھتے ہوئے واپس آجاتے ہیں۔ انگریزی میں کہاوت ہے کہ ’’اگر آپ کسی آدمی کو مچھلی دیتے ہیں تو آپ اسے ایک دن کے لیے کھانا کھلاتے ہیں اگر آپ کسی آدمی کو مچھلی پکڑنا سکھاتے ہیں تو آپ اسے زندگی بھر کھانا کھلاتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ اگر آپ کسی شخص کو مچھلی کھانے دیں گے تو آپ نے اس کی چند دنوں کی بھوک مٹا دی ہے۔ لیکن اگر آپ اسے مچھلی پکڑنے کا ہنر سکھا دیں تو وہ عمر بھر بھوکا نہیں رہے گا۔ وہ خود مچھلی پکڑے گا اور خود کھا لے گا۔ یہاں کی تربیت ماہی گیری ہے۔ میں اسے سکھا رہا ہوں کہ اس کے ذریعے لوگ غربت کی بھولبلییا سے بچ جائیں گے۔ اسی لیے میں نے امید اکیڈمی کی بنیاد رکھی ہے اور میں غریب بچوں کو تربیت دے رہا ہوں۔ جو لوگ 7، 10، 15 نسلوں سے غربت کے چکر میں پھنسے ہوئے ہیں، انہیں فوراً غربت سے باہر آنا چاہیے۔ یہی وجہ تھی کہ ’’امید اکیڈمی‘‘ وجود میں آئی۔ یہ ادارہ یکم اپریل 2018 سے شروع ہوا۔
awazurdu
 
سوال: آپ بار بار کہتے ہیں کہ امید اکیڈمی کا نصاب دوسروں سے مختلف ہے، یہ کیسے مختلف ہے؟
جواب: ہر کسی سے مختلف نہیں۔ لیکن میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ میں امیروں کی تربیت غریبوں کو دے رہا ہوں۔ یہ ہماری خاصیت ہے۔ میں وہ تعلیم دے رہا ہوں جو ملک کے بہترین ااسکولوں میں دی جارہی ہے۔ اگر آپ سرکاری ااسکولوں میں جائیں تو دیکھیں گے کہ وہاں حیاتیات کی کتابیں پڑھائی جارہی ہیں۔ یہ دل کا خاکہ ہے، یہ دل ہے، یہ اس کی شریانیں، یہ اس میں چیمبر ہے، وغیرہ وغیرہ۔ بچوں نے دل کا خاکہ ایک سرکاری اسکول میں پڑھا اور پڑھ کر 90 فیصد نمبر بھی حاصل کئے۔ . بعد میں ایک انسانی دل اس کے ہاتھ میں رکھ کر پوچھا کہ بتاؤ یہ کیا ہے؟ وہ تم سے پوچھے گا بتاؤ وہ کیا ہے؟ تو آپ کو حیرانی نہیں ہوگی کہ جن بچوں نے دل کا خاکہ پڑھا ہے اور 90 فیصد نمبر بھی حاصل کیے ہیں، پھر جب ان کے ہاتھ میں انسانی دل دیا گیا تو انہیں یہ بھی معلوم نہیں ہوگا کہ یہ انسان کا دل ہے۔
ملک کے بہترین اسکولوں میں جو تربیت دی جا رہی ہے وہ ہم یہاں دے رہے ہیں۔ بچوں کو سمعی و بصری کے ذریعے بتایا جا رہا ہے کہ دیکھو یہ دل ہے! یہ اس کے حصے ہیں۔ بلکہ بچوں کی میز پر تھری ڈی ہولوگرام رکھا ہوا ہے۔ بچے دل کے حجرے کی طرف روانہ ہوتے ہیں۔ دل کو محسوس کریں۔ دھیرو بھائی امبانی ااسکول میں اس طرح کی سہولت موجود ہے اور یہاں تک کہ بہترین ااسکولوں میں بھی اس طرح کی سہولت موجود ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ اس سطح تک کیسے پہنچیں۔
اس کے پیچھے فلسفہ یہ ہے کہ امیر اور غریب کے لباس مختلف ہو سکتے ہیں، امیر اور غریب کے گھر مختلف ہو سکتے ہیں، امیر اور غریب کا کھانا مختلف ہو سکتا ہے، امیروں کے رہن سہن کے طریقے مختلف ہو سکتے ہیں۔ غریب مختلف ہو سکتے ہیں ہاں لیکن امیر اور غریب کی کتابیں اور تعلیمی ادارے مختلف نہیں ہو سکتے۔
جب آپ ہمارے ااسکول آئیں گے، آپ کو ہمارا سبق کی منصوبہ بندی کا نظام نظر آئے گا جو کہ تعلیم کی جدید ترین تکنیک ہے۔ بچوں کو کیسے پڑھایا جائے۔ ہم تمام جدید ٹیکنالوجی استعمال کرتے ہیں۔ ہر کلاس ہمارا سمارٹ کلاس روم ہے۔ تمام بچے لیپ ٹاپ اور پروجیکٹر پر پڑھتے ہیں۔ تمام اساتذہ کے پاس لیپ ٹاپ ہیں۔ اور انشاء اللہ، ہم اگلے سال بچوں کے لیے یہ تین چیزیں متعارف کرانے جا رہے ہیں: روبوٹکس، اے آئی اور کوڈنگ۔ ہمارے اسکول کے بچوں کو دوسرے بچوں سے پیچھے نہیں رہنا چاہیے جو بڑے ااسکولوں میں جا رہے ہیں۔ ہم ااسکول کا ماڈل تیار کر رہے ہیں اور ہم چاہتے ہیں کہ ہر ااسکول میں ایسا ماڈل ہو۔ امیر اور غریب کے لیے الگ الگ ااسکول نہیں ہونے چاہئیں، ااسکول تمام بچوں کے لیے ایک جیسا ہونا چاہیے۔
سوال: کیا اکیڈمی میں دینی تعلیم کو زیادہ اہمیت دی جائے گی؟
جواب: مجھے دینی تعلیم سے کیا سمجھنا چاہیے؟ ہم اقلیتی وابستگی لینے کے خواہاں ہیں۔ ہندوستانی آئین کے آرٹیکل 13 میں اس کے لیے چھوٹ ہے۔ ہم مسلمان بچوں پر کام کرنا چاہتے ہیں۔ ہمارے اسکول کا نمونہ سی بی ایس ای بورڈ ہے۔ سی بی ایس ای کے نصاب کے ساتھ وہ مسلم بچوں کو مذہبی تعلیم بھی فراہم کرتے ہیں۔ دیگر تعلیم کے ساتھ ساتھ ہم بچوں کو قرآن اور اسلامیات بھی پڑھاتے ہیں۔ یہ دونوں مضامین اضافی ہیں۔ سائنس کو جتنی اہمیت قرآن کو دی گئی ہے، اتنی ہی اہمیت تاریخ کو دی گئی ہے جتنی اہمیت اسلامی علوم کو دی گئی ہے۔ ریاضی پر اتنی ہی توجہ دی جاتی ہے جتنی احادیث پر دی جاتی ہے۔ ہم تمام مضامین پر یکساں توجہ دیتے ہیں۔
ہم اسلامی اخلاقی تعلیم پر زیادہ توجہ دے رہے ہیں۔ جو مذہب سے ماورا جینے کا فلسفہ سکھاتا ہے۔ اسلام کی اخلاقی تعلیمات پر زور دیتا ہے۔ اچھا انسان بنانا اسلام کی بنیادی تعلیم ہے، ہم اسے طلباء تک پہنچاتے ہیں۔ اسلام آپ کو اچھا انسان بننے کا طریقہ سکھاتا ہے؟ ہمارے اسکول میں 10 فیصد بچے غیر مسلم ہیں۔ اسلامی علوم کا دور ان کی قدری تعلیم کا دور ہے۔ ہمارا ااسکول اسلامی ہے، لیکن ہمارے پرنسپل غیر مسلم ہیں۔ ان کا نام رنکو بھٹاچاریہ ہے۔ ہمارے جنرل منیجر جو تنظیم کی ریڑھ کی ہڈی ہیں، ہندوستانی فوج سے ریٹائرڈ ہیں۔ اس کا نام ابھیشیک مکھرجی ہے۔
سوال: جیسا کہ آپ کہہ رہے ہیں، اکیڈمی طلبہ کو جسمانی اور ذہنی طور پر مضبوط بناتی ہے۔ آپ کون سے نئے پروگرام لائے ہیں؟
جواب: ہم جسمانی اور ذہنی طور پر بہتر بننے کے لیے دو تین کام کرتے ہیں۔ سب سے پہلے، یہ بچوں میں اچھی سوچ پیدا کرتا ہے۔ ہم بچوں سے باقاعدگی سے بات کرتے ہیں۔ ہماری پہلی اسمبلی کا ایجنڈا بچوں کے کردار کی تعمیر ہے۔ ہر روز ہم ایک ہی بات کہتے ہیں، جھوٹ مت بولو، جھوٹ مت بولو، سچ بولو، سچ بولو، سچ بولو، سچ بولو... کسی بھی چیز کے بارے میں برا مت سوچو۔ .. برا مت سمجھو... ایک ہفتے بعد ایک موضوع آتا رہتا ہے۔ ہم سب سے پہلے یہ طے کرتے ہیں کہ اس مہینے کا موضوع کیا ہوگا اور پورے مہینے میں صرف اسی پر بات کی جائے گی۔ یہ چیز بچوں کے ذہنوں کو روحانی طور پر مضبوط کرتی ہے۔
جب بچے ہمارے پاس آتے ہیں تو وہ بہت کمزور ہوتے ہیں۔ 10 سال کا بچہ 6 یا 7 سال کا لگتا ہے۔ ہم اسے دن میں تین بار بہترین کھانا دیتے ہیں۔ میں خود بچوں کے ساتھ بیٹھ کر کھانا کھاتا ہوں۔ بچے جو کھاتے ہیں میں بھی کھاتا ہوں۔ ہم بچوں کو دودھ اور انڈے کھلاتے ہیں۔ ایک یا دو سال کے اندر بچے ویسے ہی نظر آتے ہیں جیسے وہ اپنی عمر کے تھے۔
ہمارے ہاں آنے والے بچے انتہائی خوفزدہ اور خوف زدہ ماحول میں ہیں۔ ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی ہے۔ مظالم ہوئے ہیں۔ ہم ایسے بچوں کو سیلف ڈیفنس کی تربیت بھی دیتے ہیں۔ یہ ٹریننگ دیتے ہوئے ہمیں یہ احساس نہیں ہوا کہ ہمارے بچے اتنے اچھے فائٹر بن چکے ہیں کہ وہ قومی اور ریاستی سطح پر بھی گولڈ میڈلسٹ بن چکے ہیں۔ اس کی وجہ سے بچے کی شخصیت کی نشوونما بھی ہوتی ہے۔ اس نے بہت زیادہ اعتماد حاصل کیا ہے۔
ی بی ایس ای کے نصاب میں دو اور مضامین اضافی ہیں۔ میں ذاتی طور پر پبلک سپیکنگ اور ریسرچ اور پریزنٹیشن دونوں پر کلاس لیتا ہوں۔
سوال: عام طور پر دیکھا جاتا ہے کہ مسلم لڑکیاں زچگی اور دیگر حالات کی وجہ سے تعلیم میں پیچھے رہ جاتی ہیں، امید اکیڈمی اس پر کیا خصوصی توجہ دینے جا رہی ہے؟
جواب: یقیناً ہم سمجھتے ہیں کہ لڑکیوں کی تعلیم بہت ضروری ہے۔ صرف لڑکیاں ہی نہیں بلکہ مسلمانوں کے لڑکے اور لڑکیاں بھی تعلیم میں بہت پیچھے ہیں۔ جب ہم نے شروع کیا تو ہم صرف لڑکوں کو تربیت دے رہے تھے۔ ہم جن علاقوں میں جاتے تھے وہاں لڑکیاں بھی ہمارا ہاتھ پکڑ کر بتاتی تھیں کہ انہیں بھی اسکول جانا ہے۔ 2019 میں ہم نے لڑکیوں کو لینا شروع کیا۔ اس وقت ہمارے پاس 60 فیصد لڑکے اور 40 فیصد لڑکیاں ہیں۔ اور ہم نے دیکھا ہے کہ ہم لڑکیوں سے بہت بہتر نتائج کی توقع کر سکتے ہیں۔ لیکن ان کے مقابلے میں بچے پڑھائی میں زیادہ لگن رکھتے ہیں اور زیادہ نظم و ضبط والے بھی۔
ہمارے تمام اساتذہ کا کہنا ہے کہ یہ لڑکیاں ہیں جو ہمیں فخر کریں گی۔ ہماری لڑکیاں پڑھائی میں بہت اچھی ہیں۔ اساتذہ بھی یہ کہتے ہیں کیونکہ میں اکثر کہتا ہوں کہ میں لڑکیوں کو لینا چھوڑ دوں گا، کیونکہ لڑکیوں کو داخلہ دلانا ایک بڑی ذمہ داری ہے۔ یہ کوئی آسان کام نہیں ہے۔ انہیں ہاسٹل میں رکھنا، ان کا خیال رکھنا، ان کی سیکورٹی کا بندوبست کرنا، یہ بہت مشکل کام ہیں۔ آج کی اصل کی قسم مرکز میں ماحول ہے، پتہ نہیں کون کہاں بیٹھا ہے اور لڑکیوں کو کسی زاویے سے دیکھ رہا ہے۔ شدید خوف کا ماحول ہے اس لیے ہم نے بچوں کو قبول کرنا چھوڑ دیا ہے۔ میں اسے اس وقت تک روک رہا ہوں جب تک کہ میرے پاس ایک مضبوط ٹیم نہ ہو۔
awazurdu
ولی رحمانی  اپنے گرو مامون اختر کے ساتھ جو ہوڑہ میں اپنی تعلیمی مہم کے لیے مشہور ہیں
سوال: آپ مولانا آزاد کی سرزمین سے ہیں جو ہمارے پہلے وزیر تعلیم تھے۔آزاد کا نقطہ نظر صرف تعلیم تک محدود نہیں تھا، انہوں نے ثقافت اور طرز عمل کے میدان میں بھی بہت کچھ کیا۔ کیا آپ بھی اس شو میں کچھ نیا کرنے کا سوچ رہے ہیں؟
جواب: شروع میں ہم بہت بنیادی کام کر رہے ہیں۔ ہم بچوں کو کھانا کھلا رہے ہیں۔ ہم بچوں کو چلنا سکھا رہے ہیں۔ تہذیب و آداب بہت بعد کا مرحلہ ہے۔ اس کے ساتھ مولانا آزاد کی جو بھی سرگرمیاں ہیں وہ بہت بعد میں ہو رہی ہیں۔ لیکن بنیادی بات یہ ہے کہ کوئی بچہ بھوکا نہیں سوتا ہے۔ ہر بچہ ایک اچھا لیڈر بن کر ابھرا۔ جو کمزور ہو وہ کھائے پیئے اور بہتر ہو جائے۔ پڑھائی میں اچھے بنیں۔ اسے علم والا بننا چاہیے۔ ایک اچھا شہری بنیں۔ زندگی میں کچھ کرو اور کامیاب بنو۔ ہم بہت بنیادی مرحلے پر ہیں۔ آپ بہت دور کی بات کر رہے ہیں، ہم نے ابھی تک اس کے بارے میں سوچا بھی نہیں۔ لیکن انشاء اللہ ہم اس پر ضرور سوچیں گے۔
سوال: ہندوستان نے آپ کو عوامی تحریک کے رہنما اور سیکولرازم کے حامی کے طور پر دیکھا ہے، ولی رحمانی کو آئندہ عام انتخابات میں کیسے دیکھا جائے گا
جواب: جیسا کہ میں نے پہلے کہا کہ میں سیاست سے بہت دور ہوں۔ سیاست میں سکون نہیں تھا۔ میرا سکون چھین لیا گیا۔ ہر دوسرا شخص مجھے استعمال کرنے کی کوشش کر رہا تھا کیونکہ میں جوان تھا۔ آج مجھے لگتا ہے کہ مجھے 100 ااسکول، 100 اسپتال بنانے چاہئیں جیسے میں کر رہا ہوں اور خاموشی سے کام کرتا رہوں۔ عوام کے پیسے سے میں وہی کر رہا ہوں جو حکومت کرتی ہے۔ حکومت ٹیکس لے کر اسکول اور اسپتال بناتی ہے اور میں عوام سے بھیک مانگ کر ااسکول بنا رہا ہوں۔ حکومت ٹیکس لے کر زبردستی بناتی ہے اور میں کھلے عام لوگوں سے پیسے لیتا ہوں اور ان کے پیسوں سے ااسکول بناتا ہوں۔ ہم ان کے پیسوں سے اسپتال بھی بنائیں گے اور ان کے پیسوں سے عام لوگوں کی مدد بھی کریں گے، انشاء اللہ۔
آج مجھے سیاست میں اپنا مستقبل نظر نہیں آتا۔ لیکن ہاں اگر میرے لوگ آکر مجھے بتائیں کہ سیاست میں میری ضرورت ہے تو شاید میں پھر سوچوں۔ ابھی میں خود اس کے بارے میں نہیں سوچ رہا ہوں۔ اگر میری
برادری سمجھتی ہے کہ میں اس کا مستحق ہوں تو شاید میں دوبارہ سوچوں۔
سوال: آخری سوال کی طرف... آپ حال ہی میں کی گئی فنڈ ریس کی اپیل کے ساتھ پوری دنیا تک پہنچ گئے۔ اسی طرح غریب اور محنت کش لوگوں نے آپ کی مدد کی اور آپ کو بھی ان کا پیار ملا۔ آپ نے 6 دن میں 6 کروڑ روپے اکٹھے کر لیے، ہمارے قارئین کو اس کے پیچھے کا وژن بتائیں۔
جواب: نظریہ یہ ہے کہ میں لوگوں سے بھیک مانگ کر تھک گیا تھا۔ میں اکثر امیروں کے پاس جاتا اور ان سے کہتا کہ مجھے پیسے دیں۔ لوگ مجھے دو گھنٹے باہر بٹھا کر ہزار روپے دیتے تھے۔ مجھے برا نہیں لگا اگر کسی نے مجھے ایک گھنٹہ دفتر کے باہر بٹھایا اور ایک ہزار روپے دئیے۔ میں اسے بالکل برا نہیں سمجھتا۔ لیکن مجھے بڑا کام کرنا تھا اور جلد از جلد کرنا تھا۔ میرے پاس وقت کم ہے۔ ہر شخص کے پاس وقت کم ہوتا ہے۔ آج کے دور میں انسان اگر 65 سال بھی زندہ رہے تو بڑی بات ہے۔ بہت ساری چیزیں ایسے ہی ہو رہی ہیں جیسے ہارٹ اٹیک ہو رہے ہیں۔ میں زندگی میں بہت کچھ حاصل کرنا چاہتا ہوں۔ جاؤ میرے لوگوں کے لیے کچھ کرو۔ تب میں نے محسوس کیا کہ ایسا کرنے کا سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ ہندوستان میں ہر شخص سے پیسے مانگے جائیں۔ میں ہر مسلمان سے پیسے مانگوں گا۔ تو میں نے فنڈ ریزنگ کیا۔
میرے 5 سال کے ٹریک ریکارڈ پر ایک اعتماد بنایا گیا تھا۔ لوگوں نے اپنے اعتماد کا اظہار کیا۔ 6 دن میں 6 کروڑ روپے اکٹھے ہوئے۔ اب ہم نے 7 کروڑ روپے جمع کرائے ہیں۔ ایک ہفتے میں 7 کروڑ روپے کسی کو دینا بڑی بات ہے۔ 100 روپے سے 7 کروڑ روپے جمع ہو سکتے ہیں۔ لوگوں نے اعتماد ظاہر کیا ہے، اب میری ذمہ داری ہے کہ میں عوام کے اعتماد کو مزید مضبوط کروں اور ااسکول کی عمارت کو جلد از جلد تعمیر کرکے عوام کو دکھاؤں۔ ایسے 100 ااسکول، 100 اسپتال بنائیں۔ انشاء اللہ.
سوال: 25 ستمبر کو آپ نے ہمیں بتایا کہ 5 دنوں میں 5 لاکھ سے زیادہ لین دین ہوئے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ عام لوگ بھی اچھی تعلیم حاصل کرنا چاہتے ہیں۔
جواب: میں غریبوں کے خواب پورے ہوتے دیکھنا چاہتا ہوں۔ اگر میں اسے نہیں دیکھ سکوں گا تو میری آنے والی نسلیں ضرور دیکھیں گی۔ کوئی تبدیلی ایک نسل میں نہیں آتی، پہلی نسل پہل کرتی ہے، قربانی دیتی ہےاور اس کا ثمر اگلی نسل کو دیتی ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا اگر میں اپنی زندگی میں نتائج نہیں دیکھتا ہوں۔ لیکن میری خواہش ہے کہ میری آنے والی نسل اسے ضرور دیکھے۔
ہمارے اکاؤنٹ پر 10، 50، 100 روپے کے پانچ لاکھ مالیاتی لین دین ہو چکے ہیں۔ اس لیے بینک یا انٹیلی جنس کے لوگوں کو لگا کہ کوئی بڑا گھپلہ ہو رہا ہے۔ اس لیے ہمارا بینک ٹرانسفر کچھ دنوں تک بند رہا۔ فنڈز ہم تک نہیں پہنچ رہے تھے۔ لہذا ہم نے ایکسس بینک میں ایک نیا اکاؤنٹ کھولا ہے۔ پہلے یہ آئی سی آئی سی آئی میں تھا۔ وہ قارئین جو ہمارے نیک مقصد کے لیے رقم عطیہ کرنا چاہتے ہیں ان سے گزارش ہے کہ ذیل میں دیے گئے بینک سے بینک اکاؤنٹ میں رقم منتقل کر دیں۔
 
Al Hadi Educational Trust
AC: 923020049222542
IFSC: UTIB0002759
Branch: Topsia
Axis Bank | Current Account |