کوروناکےخلاف جنگ : یوپی میں مدرسوں کو کووڈ سینٹر میں تبدیل کرنے کی پیشکش

Story by  منصورالدین فریدی | Posted by  [email protected] | Date 25-04-2021
مساجد کا بے مثال استعمال
مساجد کا بے مثال استعمال

 

 

منصورالدین فریدی ۔ نئی دہلی

کورونا کی لہر نے ملک بھرمیں قیامت کا سماں پیدا کردیا ،اکھڑتی سانسوں کو سنوارنے کےلئے آکسیجن کی جنگ اور جن کی سانسیں اکھڑ چکی ہیں،ان کی آخری رسومات ایک چیلنج بن گئیں ۔زندگی کی جنگ میں اس وقت ملک ایک صف میں کھڑا ہوگیا ہے۔ ہر کوئی پریشان ہے،ہر ایک کا مسئلہ ،دوسرے سے زیادہ سنگین نظر آرہا ہے۔لیکن سب سے اہم بات یہ ہے اس بد ترین بحران میں ہم سب ایک ہیں۔ ہر فرق مٹ چکا ہے۔ کیا امیر اور کیا غریب۔کیا ہندو،کیا مسلمان اور کیا سکھ اور کیا عیسا ئی۔یہی نہیں ہر قوم کےعبادت گاہیں بھی اب نئی شکل میں نظر آرہی ہیں۔جہاں بیڈ اور بستر لگے ہیں۔آکسیجن دستیاب ہیں۔ڈاکٹرز موجود ہیں۔یہ ہے عبادت گاہوں کا انسانی خدمت کےلئے استعمال ۔

ملک بھر سے ایسی خبریں آرہی ہیں کہ مساجد میں کورونا کے مریضوں کےلئے خصوصی انتظام کیا جارہا ہے، مساجد کو کووڈ سینٹر میں تبدیل کیا جارہا ہے۔مساجد سے ہی آکسیجن سلینڈر تقسیم کئے جارہے ہیں۔لوگوں کو بلا تفریق مدد دی جارہی ہے۔کیا ممبئی،کیا پونے،کیا کولکتہ اور کیا دہلی۔کیا بنگلور ۔ملک کے کونے کونے سے مساجد کو کووڈ سینٹر میں تبدیل کرنے کی خبریں آرہی ہیں۔اب اتر پردیش  سے یہ پیشکش بھی ہوئی ہے کہ ریاست کے مدرسوں کو کووڈ سینٹرز کےلئے استعمال کیا جائے۔لوگ بڑھ چڑھ کر عبادت گاہوں کو انسانی خدمت کےلئے استعمال کرنے کی پہل کررہے ہیں۔ایک مثبت سوچ اور قدم۔جو ملک کے فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو کہیں نہ کہیں استحکام بخشے گا۔

مدرسوں کو کووڈ سینٹر بنانے کی پیشکش

 لکھنو میں اسلامک مدرسہ ماڈرنائزیشن ٹیچرزایسوسی ایشن آف انڈیا نے اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ کو خط لکھا ہے کہ تمام ریاستی مدرسوں کو کووڈ سینٹرز میں تبدیل کیا جائے۔ساتھ ہی ان سینٹرز میں اساتذہ کی خدمات کی پیشکش بھی کی ہے۔ خط میں کہا گیا ہے کہ یہ فیصلہ ریاست اور ملک میں کوویڈ 19 مریضوں کے بیڈ کے بحران کے پیش نظر لیا گیا ہے۔ ہر ضلع میں متعدد مدرسے ہیں جن کو کوڈ کی سہولیات میں تبدیل کیا جاسکتا ہے۔ مدرسہ اساتذہ بھی کووڈ سینٹرز میں مددگار کی حیثیت سے کام کرنے پر راضی ہیں ، لہذا ان کی خدمات کو ریاست اور ملک کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔اساتذہ کی انجمن نے کہا ہے کہ مدرسہ اساتذہ بھی لوگوں کی جان بچانے اور حکومت کی بحران میں مدد کرنے کے لئے تیارہیں۔وزیراعلیٰ کو بھیجی گئی درخواست کے جواب کا انتظار ہے ،ایسوسی ایشن کو امید ہے کہ ان کی جگہ اور خدمات بڑے پیمانے پر معاشرے کے لئے کارآمد ثابت ہوسکتی ہیں۔

جماعت اسلامی کی پہل

دہلی میں جماعت اسلامی ہند (جے آئی ایچ) نے ، اسٹوڈنٹ اسلامک آرگنائزیشن(ایس آئی او) کے اشتراک سے اوکلا کے ابوالفضل انکلیو میں اپنے صدر دفاتر میں ایک قومی سطح کی کوویڈ ریلیف ٹاسک فورس قائم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ایک ویڈیو پیغام میں جے آئی ایچ کے قومی صدر سید سعادت اللہ حسینی نے کہا کہ انہوں نے آٹھ پروگراموں کی بنیاد پر ٹاسک فورس تشکیل دی۔یہ مرکزاسپتالوں میں بستر ، آکسیجن ، مطلوبہ دوائیں اور پلازما عطیہ جیسی ضروری سہولیات کا سراغ لگائے گا۔

چاندنی چوک سے پھیلی چاندنی

 دہلی کے چاندنی چوک میں مسجد شاہی باغ والی نے ایک ریلیف سینٹر قائم کیا ہے۔ساتھ ہی ایک پوسٹر بھی جاری کیا ہے جس میں مفت آکسیجن سلینڈر کی پیشکش کی گئی ہے۔پوسٹر میں کہا گیا ہے کہ آکسیجن کی کمی ہو تو ہم سے رابطہ قائم کرنے میں کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہ کریں۔۔مسجد کی جانب سے آٹھ لیٹروالا آکسیجن سلینڈر مہیا کرایا جارہا ہے۔ اس مسجد سے کلاں محل،ترکمان گیٹ،شکور کی ڈنڈی،کوچہ چیلان، اجمیری گیٹ،حوض رانی،آزاد مارکیٹ،نظام الدین ویسٹ اور تہرا بہرام خان کے علاقوں میں آکسیجن سلینڈر سپلائی کئے گئے ہیں۔

عید گاہ کی پیشکش

مدھیہ پردیش کے ضلع رائسین کے منددیپ علاقے کے مسلمانوں نے کوڈ کیئر سنٹر قائم کرنے کے لئے عیدگاہ کے احاطے کی پیش کش کی ہے۔حاجی سہیل خان نے کہا کہ عیدگاہ کےعلاوہ ہم نے ضلعی انتظامیہ کو قبرستان کے قریب ایک اور جگہ پیش کش کی ہے تاکہ وہ کورونا کا مقابلہ کریں۔ 5 ایکڑ والی عیدگاہ 100 بستروں پر مشتمل کوویڈ کیئر سنٹر کے لئے استعمال کی جاسکتی ہے۔ قبرستان سے متصل ایک اور جگہ کا احاطہ کیا گیا ہے اور اس میں 60 بیڈ لگ سکتے ہیں۔ضلعی انتظامیہ پر منحصر ہے کہ وہ اس جگہ کو کوڈ کیئر سنٹر، ایک ویکسینیشن سنٹر یا وبائیبیماری کسی بھی چیز کے طور پر استعمال کرے۔اس اقدام کی تعریف کرتے ہوئے را ئسین کے ضلعی کلکٹر نے کہا کہ انہوں نے اس جگہ کو اپنی فہرست میں شامل کرلیا ہے اور ضرورت پڑنے پر انہیں آگاہ کریں گے۔

پونے میں پہل

مہاراشٹرا کے شہر پونے میں 50 مریضوں کی رہائش کے لئے ایک مسجد کو کوووڈ 19 سینٹر یں تبدیل کردیا گیا۔ یہ جہانگیر پورہ کی مسجد کو ہے۔انتظامیہ کا کہنا ہے کہ کورونا کے علاج کی سہولیات کی کمی نے انہیں یہ قدم اٹھانے پر مجبور کیا۔اس کا فائدہ یہ ہوگا کہ اب علاقے کے متاثرہ افراد کو کسی اسپتال کا رخ کرنا نہیں پڑے گا۔

ناگپور میں بھی ایک سینٹر قائم

جماعت اسلامی ہند نے ناگپور میں میونسپل کارپوریشن کے ساتھ مل کر ناگپور میں ایک 87 بستروں کا کوڈ سرشار اسپتال تشکیل دیا ہے۔یہاں دو ایم بی بی ایس ڈاکٹر ہیں جماعت اسلامی کے عہدیداروں کے مطابق ۔وقت کے ساتھ ، ہمارے علاقے میں اس طرح کے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔

awaz

awazurdu

وڈوڈرا میں مسجد بنی کووڈ سینٹر

گجرات کے شہر وڈوڈرا کی ایک مسجد کوکووڈ اسپتال میں تبدیل کردیا گیا ہے۔ جہانگیر پورہ مسجد میں مریضوں کی دیکھ بھال کے لئے 50 سے زیادہ بستر لگائے گئے ہیں۔ ان کا یہاں علاج کیا جارہا ہے۔

awazurdu

مساجد سے آکسیجن سلینڈر کی سپلائی

ممبئی اور نواحی علاقوں کی متعدد مساجد نے کوویڈ 19 کے مریضوں کو آکسیجن سلنڈر فراہم کرنا شروع کردیئے ہیں اور اس کے نتیجے میں اسپتالوں سے کچھ دباؤ کم ہواہے۔ مفت آکسیجن سلینڈر کے ساتھ کٹسبھی دی جارہی ہیں۔جنہیں گھر لیجا کر با آسانی مریض کو لگایا جاسکتا ہے۔ این جی او ریڈ کریسنٹ سوسائٹی آف انڈیا کے ذریعہ شروع کردہ ، ممبئی میٹروپولیٹن ریجن میں متعدد مساجد کے ذریعہ آکسیجن سلنڈر مہیا کیے جارہے ہیں ، جن میں شہر ، ممبرا ، میرا روڈ ، کلیان اور بھیونڈی شامل ہیں۔ریڈ کریسنٹ سوسائٹی آف انڈیا کے چیئرمین ارشاد صدیقی نے کہا کہ ہہ وبائی بیماری کے خلاف ہماری متحدہ جنگ ہے اور ہم نے ضرورت مندوں کی مدد کے لئے بیڑا اٹھایا ہے۔

 یہ کام بغیر کسی مذہب ، ذات پات یا فرقہ کے مفت میں فراہم کیا جارہا ہے۔ صدیقی سے جب یہ پوچھا گیا کہ انہوں نے مساجد کو اس کام میں شامل کرنے کا انتخاب کیوں کیا تو انہوں نے کہا کہ انہیں دن میں صرف پانچ بار نماز کے لئے استعمال نہیں کیا جانا چاہئے۔ یہ خدا کا گھر ہے ، ایک مقدس جگہ ہے ، اور ہمیں لگتا ہے کہ ایک اچھا کام کسی مقدس جگہ سے شروع ہونا چاہئے۔ ہمیں تمام کمیونٹیز سے درخواستیں موصول ہو رہی ہیں۔

ممبئی میں لاتعداد مساجد سے آکسیجن کی تقسیم ہورہی ہے ،یہ کام بلا تفریق جاری ہے۔ ممبئی کا اولیو ٹرسٹ  بھی کوووڈ کے مریضوں کو آکسیجن مہیا کررہا ہے۔ٹرسٹ کے سربراہ مفتی طاہر کہتےہیں کہ ہماری کوشش ہے کہ جتنے مریضوں کو ہو سکے آکسیجن مہیا کرا سکیں۔دن رات کام چل رہا ہے۔ اس کے ساتھ ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کے سربراہ ارشد صایقی نے کہا ہے کہ یہ ایک جنگ ہے،جس کو ہم متحد ہوکر لڑ رہے ہیں،مقصد صرف پریشان حال لوگوں کی مدد کرنا ہے،خواہ وہ کسی بھی مذہب کا ہو یا ذات کا ۔اس سے کوئی سرو کار نہیں۔ اس وقت انسانیت کے بقا کا مسئلہ ہے۔

ایک ہزار سلنڈر

ممبئی میں ہی ڈاکٹر عظیم الدین جو گھر میں علاج کرانے والے مریضوں کے لئے آکسیجن کے انتظام میں رضاکارانہ خدمات انجام دے رہے ہیں، نے بتایا کہ اب تک ایک ہزار سلنڈر تقسیم کیے جاچکے ہیں۔بہت سے لوگ مر رہے ہیں کیونکہ انہیں وقت پر آکسیجن نہیں مل رہی ہے۔ میں نے آکسیجن کی کمی کی وجہ سے مریضوں کو مختلف اسپتالوں سے واپس بھیجتے دیکھا ہے۔ اگر آکسیجن کی مناسب فراہمی ہو تو بہت سی جانوں کو بچایا جاسکتا ہے۔ڈاکٹر عظیم الدین نے مزید کہا کہ اور مساجد کو کھول دیا جائے گا ۔