تعددازواج کا رواج سب سے زیادہ مسلمانوں میں نہیں:اعداد کیا کہتے ہیں؟

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 19 d ago
تعددازواج کا رواج سب سے زیادہ مسلمانوں میں نہیں:اعداد کیا کہتے ہیں؟
تعددازواج کا رواج سب سے زیادہ مسلمانوں میں نہیں:اعداد کیا کہتے ہیں؟

 

نئی دہلی: اتراکھنڈ اسمبلی نے دو دن کی بحث کے بعد 7 فروری کو یکساں سول کوڈ (یو سی سی) بل 2024 کو پاس کیا۔ یہ بل ریاست میں تمام برادریوں (سوائے قبائلیوں) میں شادی، طلاق اور وراثت جیسی چیزوں کو کنٹرول کرنے والے ذاتی قوانین میں یکسانیت لاتا ہے۔ یوسی سی جیسا کہ اتراکھنڈ میں لاگو ہوتا ہے، دوسری چیزوں کے علاوہ، مسلمانوں میں یک زوجگی (ایک وقت میں ایک بیوی) کے اصول کو بڑھاتا ہے۔ نکاح کی ایک شرط یہ ہے کہ "نکاح کے وقت کسی بھی فریق کا سابقہ ​​شریک حیات زندہ نہ ہو"۔

یہ دفعہ 1955 کے ہندو میرج ایکٹ میں پہلے سے موجود تھی لیکن مسلم پرسنل لا اب تک مردوں کو چار بیویاں رکھنے کی اجازت دیتا تھا۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا موجودہ ہندوستان میں مسلمان مردوں میں تعدد ازدواج کا رواج عام ہے؟ اس حوالے سے اعداد و شمار کیا ہیں؟ تعدد ازدواج کے بارے میں حکومتی ڈیٹا دو اہم ذرائع سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔ پہلی قومی سطح پر 10 سال میں ایک بار مردم شماری کرائی جاتی ہے۔ دوسرا نیشنل فیملی ہیلتھ سروے ہے۔ تاہم دونوں کی کچھ حدود ہیں۔

مردم شماری براہ راست تعدد ازواج پر ڈیٹا اکٹھا نہیں کرتی۔ بلکہ اس کا اندازہ ملک میں شادی شدہ مردوں اور شادی شدہ عورتوں کی تعداد میں فرق سے لگایا جاتا ہے۔ اگر مردوں سے زیادہ شادی شدہ خواتین کے اعداد و شمار موجود ہیں، تو یہ اندازہ لگایا جاتا ہے کہ مردوں نے ایک سے زیادہ شادیاں کی ہیں۔ تاہم، شادی شدہ مردوں اور شادی شدہ عورتوں کی تعداد میں فرق کو صرف تعدد ازواج سے منسوب نہیں کیا جا سکتا۔ کئی بار ایسا بھی ہوتا ہے کہ بیرون ملک ملازمت کے لیے جانے والے مردوں کی شریک حیات گھر پر ہی رہتی ہیں۔

مزید برآں، حالیہ مردم شماری ایک دہائی سے بھی زیادہ عرصہ قبل، 2011 میں کی گئی تھی۔ اب آتے ہیں نیشنل فیملی ہیلتھ سروے کی طرف جو حال ہی میں منعقد کیاگیا تھا۔ اس سروے کے دوران خواتین سے براہ راست سوال کیا گیا کہ آپ کے علاوہ بھی آپ کے شوہر کی دوسری بیوی ہے؟حالانکہ اس سروے میں ایک فیصد سے بھی کم آبادی کا نمونہ لیا جاتا ہے۔ 2011 کی مردم شماری کے مطابق، ہندوستان میں 28.65 کروڑ شادی شدہ مرد اور 29.3 کروڑ شادی شدہ خواتین ہیں۔

دونوں نمبروں کے درمیان فرق 65.71 لاکھ کا ہے۔ یہ فرق تعدد ازواج اور مردوں کے بیرون ملک منتقل ہونے کے واقعات کی وجہ سے بھی ہو سکتا ہے۔ شادی شدہ مردوں اور عورتوں کی آبادی میں سب سے بڑا فرق ہندوؤں (بھارت کی اکثریتی آبادی) میں پایا جاتا ہے، اس کے بعد مسلمان، سکھ، عیسائی، سکھ اور بدھ مت ہیں۔ تاہم جب کل ​​آبادی میں متعلقہ مذاہب کے حصص کا موازنہ کیا جائے تو سب سے بڑا فرق مسلمانوں اور عیسائیوں کے درمیان نظر آتا ہے۔

نیشنل فیملی ہیلتھ سروے نے ظاہر کیا کہ مذہب کے لحاظ سے تعدد ازواج (عورتوں کا فیصد جو کہ ان کے شوہروں کی دوسری بیویاں ہیں) کا پھیلاؤ عیسائیوں میں سب سے زیادہ تھا۔ (2.1فیصد)، اس کے بعد مسلمان (1.9فیصد) اور ہندو (1.3فیصد) مقام تھا۔ مجموعی طور پر، تعدد ازواج کے سب سے زیادہ واقعات (2.4فیصد) درج فہرست قبائل میں ریکارڈ کیے گئے۔ دی انٹرنیشنل انسٹی ٹیوٹ آف پاپولیشن سائنسز (آئی آئی پی ایس ) نے جون 2022 میں ایک مطالعہ شائع کیا جس کا عنوان تھا

Polygyny in India: Levels and Differentials۔ مطالعہ نے -3 (2005-06)نیشنل ہیلتھ فیملی سروے ،

-4 (2015-16) اور

-5 (2019-21)‏ کے ڈیٹا کا تجزیہ کیا۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پوری آبادی کے درمیان کثیر ازدواجی شادیوں (ایک مرد کا ایک سے زیادہ عورتوں سے شادی) کی تعداد میں کمی سست رہی ہے۔ ہندوستان میں کثیر ازدواجی شادیوں کی تعداد 2005-06 میں 1.9فیصد تھی جو 2019-21 میں گھٹ کر 1.4فیصد رہ گئی۔

بدھ مت کے پیروکاروں نے 2005-06 میں تعدد ازواج کے 3.8 فیصد واقعات کی اطلاع دی۔ 2019-21 میں اس طرح کے واقعات میں 65.79 فیصد کی کمی واقع ہوئی اور تعدد ازواج کی شادیوں کی تعداد کم ہو کر 1.3 فیصد رہ گئی۔ کُل آبادی میں تعدد ازدواج کے واقعات میں 26.31 فیصد کمی واقع ہوئی۔