لیفٹیننٹ جنرل سید عطا حسنین: وزیر اعظم سلکیارا بچاؤ آپریشن کے دوران دن میں چھ بار فون کر رہے تھے

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 3 Months ago
 لیفٹیننٹ جنرل سید عطا حسنین: وزیر اعظم سلکیارا  بچاؤ آپریشن کے دوران دن میں چھ بار فون کر رہے تھے
لیفٹیننٹ جنرل سید عطا حسنین: وزیر اعظم سلکیارا بچاؤ آپریشن کے دوران دن میں چھ بار فون کر رہے تھے

 

عاطر خان 

اترکاشی میں سلکیارا سرنگ کا بحران دور ہوگیا،سرنگ کے مہندم ہونے کے بعد اس کے اندر پھنسے مزدوروں کو بچا لیا گیا۔ایک بڑی مہم اور  ایک نازک آپریشن ۔ جس میں ملک نے بازی مار لی ۔ جب آزمائش 17 دن اور 400 گھنٹے کے شاندار ٹیم ورک کے بعد ختم ہوئی تو ایک متحد ہندوستان سامنے آیا۔ یہ آپریشن ہندوستانی تنوع کی بہترین مثال تھی-بات واضح ہے کہ جب ہندوستانی مل کر کام کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں۔ وہ سب سے بڑے چیلنجوں کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔ اس آپریشن میں ایجنسیوں سے انجینیرنگ کمپنیوں اور مزدوروں تک سب سے مل کر جو کام انجام دیا اس نے تاریخ رقم کردی ۔اس آپریشن میں کئی بڑے نام اور چہرے شامل تھے۔ جن میں ایک نام لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ سید عطا حسنین  کا بھی ہے جو این ڈی ایم اے کے ایک رکن ہیں جو کہ ریسکیو آپریشن کی قیادت کرنے والی اہم ایجنسیوں میں سے ایک تھی۔ عطا حسنینن نے اس پورے آپریشن کے بارے میں آواز دی وائس کو ایک تفصیلی انٹرویو میں بڑی اہم معلومات دیں اور بتایا کہ کس طرح ملک کے وزیر اعظم سے ایک مزدور تک نے کس طرح اس میں اہم کردار ادا کیا۔

پیش ہے لیفٹیننٹ جنرل سید عطا حسنین کا انٹرویو ۔۔۔

سوال- جناب، این ڈی ایم اے کے ممبر ہونے کے ناطےایک کامیاب ریسکیو آپریشن آپ کے لیے کافی راحت اور اطمینان کا باعث رہا ہوگا۔
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ اپنی نوعیت کا آپریشن تھا۔ لیکن مجھے یقین تھا کہ میں اس مشن کی تکمیل کروں گا،  کیونکہ اس کے لیے خود وزیر اعظم، وزیر اعظم کا دفتر، سڑک ٹرانسپورٹ اور ہائی ویز کی وزارت، وزارت داخلہ اور پھر ہندوستان، حرکت میں تھا اور  ہندوستانی فوج اور ہندوستانی فضائیہ اور دیگر انفراسٹرکچر ایجنسیاںایجنسیاں بھی سرگرم تھیں
میرا مطلب ہے کہ بہت ساری اور غیر ملکی ماہرین کو آگے آئے جنہیں بورڈ میں لایا گیا تھا - یہ واقعی پورے ہندوستان کی کوشش تھی۔ میرے خیال میں اس قسم کی کامیابی کبھی حاصل نہیں ہوئی۔
سوال: یہ بالکل حیرت انگیز ہے۔ جناب آپ ریسکیو آپریشن کے بارے میں تفصیلی معلومات پہنچانے میں بہت اہم کردار ادا کر رہے تھے۔ ریسکیو آپریشن میں کمیونیکیشن اس کے کامیاب ہونے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ جب آپ ملک کو بریفنگ دے رہے تھے تو آپ کے ذہن میں کیا گزر رہا تھا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: یہ ایک بہت ہی متعلقہ سوال ہےاور ہندوستان میں عام طور پر لوگ یہ سوال نہیں کرتے۔ لیکن اب میں بہت خوش ہوں کہ ہندوستان میں یہ احساس ہو رہا ہے کہ کسی بھی مشکل صورتحال میں، چاہے وہ جنگ کی ہو، چاہے وہ حادثہ ہو، چاہے وہ کسی بھی قسم کی آفت ہو، عوامی معلومات ایک انتہائی اہم  ہے۔ یہ عوام کو سچائی سے اچھی طرح باخبر رکھنے، سچائی پر شفافیت کے ساتھ  اعتماد کو برقرار رکھنے کے ساتھ کوئی غیر ضروری توقعات پیدا نہیں کرتا۔
ہم نے اس بات کو یقینی بنانے کی پوری کوشش کی کہ ہم نے قوم کو ایک اعتماد دیا  کہ یہ واحد طریقہ نہیں ہے جسے ہم استعمال کر رہے ہیں اسے تقریباً ایک جنگی علاقے میں کیسے بنایا گیا۔ ہم نے ہر ایک آپشن کو دیکھا ہے جس کی ہم آپ کو جانچ کر رہے ہیں۔ لہذا، اگر ایک آپشن ناکام ہو جاتا ہے، تو دوسرے آپشنز کے مقابلے بہت زیادہ کھل جائیں گے۔
لہذا، یہ اس قسم کے شفاف معلومات کے تبادلے کے عمل کے لیے ہے جو ہو رہا ہے۔ وہ اعتماد سازی آبادی کے ساتھ کی جا رہی تھی۔
اور ان ایجنسیوں پر بے جا دباؤ نہیں ڈالتا جو اس طرح کے کام میں ملوث ہیں۔ اس خاص معاملے میں نیز ان رشتہ داروں پر زیادہ دباؤ جو وہاں ڈیرے ڈالے ہوئے تھے، ان میں سے بہت سے لوگ جانتے ہیں کہ وہ اچھی طرح سے باخبر تھے۔ لہٰذا، تمام ضروری تکنیکی تفصیلات، وغیرہ، اور اعتماد سازی کے ساتھ ان معلومات کو لانے کا کام ہندوستان انجام دے رہا تھا۔
اور میں یہ کہنے کی جسارت کرتا ہوں کہ اگر ہمارا ہر اس چیز سے تعلق تھا جو موقع پر ہو رہا تھا، ہمارے روابط تمام وزارتوں کے ساتھ تھے، ہمارے پی ایم او کے ساتھ رابطے تھے اور ہم ان تمام فیصلہ سازی کے لیے آزاد تھے جو ہو رہا تھا، چیلنجز جو وقتاً فوقتاً سامنے آتے رہتے تھے، خاص طور پر اس وقت جب  اوجر مشین اس قسم کی مایوسی سے ٹوٹ گئی تھی جو شاید اس وقت آگے بڑھ چکی ہوگی۔
 
 
سوال: یہ آپریشن ایک تازہ کیس اسٹڈی ہے جہاں تمام ہندوستانی، مذہب  سے قطع نظر، ایک مقصد کے لیے اکٹھ متحد ہوئے۔ آپ نے ہندوستانی فوج میں آخری ٹیموں سے پہلے کئی ٹیموں کی قیادت کی ہے لیکن حالیہ دنوں میں ایسی ٹیم کا حصہ بننے کا تجربہ کیسا رہا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: ایک بات تو بہت واضح تھی کہ میرا آرمی میں 40 سال کا سابقہ تجربہ تھا۔ جی ہاں. کشمیر جیسی جگہ پرہمارے پاس بہت ساری ایجنسیاں تھیں جو وردی پوش افواج کے ساتھ مل کر کام کر رہی تھیں۔ ہمارے پاس انٹیلی جنس ایجنسیاں تھیں۔
مجھے ہر 10 سیکنڈ میں ایک پیغام مل رہا تھا۔ لوگ مجھے مفت خدمات پیش کر رہے تھے۔ یہ سب سے بہتر ہندوستان تھا۔ میں نے ایسا ہندوستان کبھی نہیں دیکھا۔ ہندوستان  اپنے بہترین انداز میں سامنے تھا۔ سب کچھ ہر کوئی ان 41 لوگوں کے لیے خدا کا نام لے کر دعا کر رہا تھا۔
سب عبادت کررہے تھے نا؟ اور کسی نے ذات، ، مسلک یا مذہب کو نہیں دیکھا۔ لیکن سب نے مل کر اس کوشش کو انجام دیا۔ بلاشبہ اس کی قیادت اوپر سے دائیں طرف سے عزت مآب وزیراعظم کر رہے تھے، آپ اس بات کو یقینی بنانا چاہیں گے کہ وہ دن میں تین، چار، پانچ، چھ بار رائے لے رہے تھے اور ہدایات دے رہے تھے۔
وزیر اعظم کے سکریٹری ڈاکٹر مشرا اس میں ذاتی طور پر شامل تھے، خود اور عملے کے ساتھ اس کا تجزیہ کرتے رہے اور پھر ہدایات دیتے رہے، وہاں موجود کارکنوں سے بات کی انہیں ضروری اعتماد دیا-
اس کے ساتھ کام کرنے والی تمام ایجنسیوں کو حوصلہ دیا۔ مجھے لگتا ہے کہ میں نہیں جانتا کہ میں نے سب کا ذکر کیا ہے لیکن ابھی بھی بہت سے لوگ ہیں جنہیں تسلیم کرنا ہے لیکن پھر بالآخر یہ سارا ہندوستان تھا۔ اس لیے ہمیں پورے ہندوستان کو تسلیم کرنا ہوگا۔
سوال: بالکل جیسا کہ آپ نے پی ایم کی حساسیت کے بارے میں بات کی۔ بچاؤ کے لیے پی ایم مودی کا نقطہ نظر اور ان کی ذاتی دلچسپی واقعی قابل ذکر تھی۔ لیکن ہمیں بتائیں کہ ٹیم کے ارکان اور پھنسے ہوئے کارکنوں کے حوصلے بلند کرنے میں یہ کیسے کارگر ثابت ہوا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: اس میں کوئی شک نہیں۔ آپ نے دیکھا، یہ بہت واضح ہو رہا تھا کہ موقع پر کافی لوگ جا رہے تھے۔ نتن گڈکری،  پشکر سنگھ دھامی، جنرل وی کے سنگھ سبھی اس آپریشن میں شامل تھے۔ میرا مطلب ہے، یہ جنگ  جیسا ہو گیاتھا - بہت سارے لوگ تھے جواس مہم میں جڑگئے تھے جس کی وجہ سے خدمات دستیاب ہوئیں۔
جب وزیر اعظم خود مداخلت کر رہے تھے تو ظاہر ہے کہ لوگوں کے حوصلے بلند تھے،جو اندر پھنسے ہوئے تھے-یہی وجہ ہے کہ آپریشن 17 دن میں ختم ہوا میرے اندازے کے مطابق یہ 45 دن یا 50 دن تک چل سکتا تھا۔ ہمارے پاس مختلف آپشنز تھے جن میں اتنا وقت لگ جاتا، میرے خیال میں کارکنوں کے پاس زندہ رہنے کی صلاحیت ہوتی۔
سوال:ٹھیک ہے۔ لیکن جناب ہمیں یہ جاننے کا تجسس ہے کہ جب اتنی ٹیمیں شامل تھیں تو فیصلے کیسے ہو رہے تھے۔ فیصلہ سازی کیسے ہو رہی تھی؟ میرا مطلب ہے کہ ہر قدم کے ساتھ بہت زیادہ مشاورت ہونی چاہیے، ہے نا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: زمین پر زبردست مشاورت ہوئی جو ہو رہی تھی۔ تکنیکی اداروں میں کوئی مداخلت نہیں کر رہا تھاحالانکہ باقی تمام ایجنسیوں کے نمائندے وہاں موجود تھے۔ یہاں تک کہ وزیراعظم آفس کے اعلیٰ حکام بھی وہاں موجود تھے۔ لہذا وہ لنک تھے جو معلومات کے کسی بھی حوالے کے لیے دستیاب تھا جس کے لیے پی ایم او سے ضروری فیصلے کی ضرورت تھی۔
تمام تکنیکی معلومات آ رہی تھیں اور مناسب فیصلہ لیا جا رہا تھا۔ اب پھر میں نے بہت سی بحثیں کیں جو لامحالہ اس واقعے کے بعد ہوئیں کہ کان کنوں کو پہلے بھیج دیا جانا چاہیے تھا۔ کوئلے کے صحیح کان کن شاید پہلے کے وقت میں یہ حاصل کرنے میں کامیاب ہو جاتے وغیرہ۔
میرا مطلب ہے-آپ اس پر بحث کر سکتے ہیں، آپ اسے پڑھ سکتے ہیں جیسے آپ اس پر ہندوستانی کرکٹ ٹیم کی ساخت پر بحث کر سکتے ہیں۔ اسی طرح ایک جمہوری ملک میں سب کی رائے ہوتی ہے، ہم دراصل اسی میں ترقی کرتے ہیں۔
سوال: ریسکیو آپریشن کی کامیابی کے لیے دعا گو رہے سب۔ اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہندوستانیوں کا ٹیم ورک کسی بھی چیلنج کا مقابلہ کر سکتا ہے۔ آپ کے کیا خیالات ہیں؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: بے شک وہاں کوئی مذہبی شناخت نہیں تھی۔ نہ کوئی آئی ڈی تھی اور نہ ہی کوئی اپنے عقیدے کا رنگ یا اپنے عقیدے کا جھنڈا کسی بھی طرح سے اٹھائے یا دکھا رہا تھا۔ ہم سب اپنے اپنے فرائض سرانجام دے رہے تھے۔ یہاں تک کہ آسٹریلیا کے ماہر کو بھی وہاں پوجاکرتے دیکھا گیا۔ اس لیے مجھے فوراً یاد دلایا گیا کہ جب میں سیاچن گلیشیئر پر چڑھ رہا تھا تو ہمارے پاس بھی کچھ ایسا ہی تھا۔ ہمارے پاس ایک غار تھا اور ہمارے پاس ایک بابا تھا، جس کے پاؤں یونٹ کا ہر آدمی جو اوپر جاتا تھا چھوتا تھا، خواہ وہ مسلمان ہو یا عیسائی۔ الہی کی طرف سے مداخلت ہندوستان میں ایک بہت اہم عقیدہ ہے۔ آپ کے پاس الہٰی مداخلت تلاش کرنے کا فطری رجحان ہےاور یہ وہی ہے جو ہم دیکھتے ہیں. یہ بات ہے کہ آپ کا تعلق کس مذہب، کس عقیدے یا کس گوتر سے ہے، آپ کا تعلق کس مسلک سے ہے۔ یہی وہ جذبہ ہے جس کے ساتھ ہم نے مسلح افواج میں کام کیا ہے۔ ہمیشہ یہی وہ جذبہ ہے جس کے ساتھ میرے خیال میں باقی ہندوستان بھی زیادہ تر کام کرتا ہے، سوائے ایک یا دو کے۔
 
سوال: جی ہاں، بالکل۔ تو کیا آپ اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ ہندوستانی اب اپنے ہم وطنوں کی حفاظت کرنے کی پوزیشن میں ہیں جیسا کہ پہلے کبھی نہیں تھا، اور ہم ان کی حفاظت کے لیے کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں؟ ہوسکتا ہے کہ یہ عراق کی 46 نرسوں، افغانستان میں ہندوستانیوں، یوکرین کی جنگ میں پھنسے طالب علموں کو بچانا ہو۔ یہ ہمیں کیا بتاتا ہے، وزیر اعظم مودی مصیبت میں تمام ہندوستانیوں کی حفاظت میں ذاتی دلچسپی لیتے ہیں۔ یہ کچھ بے مثال ہے، ہے نا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: دراصل، عزت مآب وزیر اعظم جناب مودی نے ایک بہت ہی اعلیٰ معیار قائم کیا ہے، جو عالمی سطح پر مداخلت اور جان بچانے کے معاملے پر ہے۔ میرا مطلب ہے کہ کوویڈ وبائی مرض کے دوران دنیا بھر سے لوگوں کو واپس لانا کتنا بڑا آپریشن تھا۔ لہذا یہ معیار جو بنایا گیا ہے اسے برقرار رہنا پڑے گا، اس کے ساتھ برقرار رہنا پڑے گا اور یہ اس چیز کا حصہ بن گیا ہے جو میں دیکھ رہا ہوں، ایک وجودی نظریے کا ایک حصہ۔ یہ ایک ان کہی نظریہ ہے۔ اگر کہیں کوئی مسئلہ ہے اور وہاں ہندوستانی پھنسے ہوئے ہیں تو یہ ہندوستان کی حکومت کا فرض ہے اور وہ ہر چیز کو منتقل کرے گی، ہر ممکن وسائل کو اس بات کو یقینی بنانے کے لئے کہ وہ اسے صحیح طریقے سے واپس لے سکیں۔
سوال:یہاں تک کہ پھنسے ہوئے کارکنان کی اسپرٹ قابل ذکر تھی۔ ہے نا؟
لیفٹیننٹ جنرل حسنین: جیسا کہ آپ نے بالکل درست کہا آپ میں تحمل، لچک نظر آتی ہے۔ ان کی ضروریات بہت کم ہیں۔ اگر آپ اونچائی والے علاقوں میں جائیں اور دیکھیں کہ کچھ مزدور، جو سرحدی سڑکوں پر کام کر رہے ہیں، سرحد سے جو سڑکیں بن رہی ہیں، سڑکیں، وہ بالکل عام زندگی گزار رہی ہیں، کچھ بھی نہیں۔
ان کے لیے کچھ بھی دستیاب نہیں ہے۔ ان کے ساتھ بچے بھی ہیں اور ان کی بیویاں بھی انہی سڑکوں پر کام کر رہی ہیں۔ جب ہم نے بچائے گئے لوگوں کے چہرے دیکھے تو وہ بہت خوش نظر آئے۔ وزیراعلیٰ کی بات تو یہ ہے کہ وہاں ہر قسم کے لوگ کھڑے ہیں انہیں کھانے کی چیزیں دے رہے ہیں۔ یہ ایک سنہری لمحہ تھا، ہندوستان کا سنہری لمحہ۔ ہم نے ان لوگوں کو بچایا جن کا کسی سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ پورا ہندوستان دعا کے لیے اکٹھا ہوا، پورا ہندوستان ان کو بچانے کے لیے اکٹھا ہوا۔ اس سے صرف یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہندوستان کے عروج کے لیے سالوں میں کس طرح بدلا ہے۔