امارت شرعیہ : ’خلع’ کو آسان بنانے کی کامیاب مہم

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 1 Years ago
Nnامارت شرعیہ : ’خلع’ کو آسان بنانے کی کامیاب مہم
Nnامارت شرعیہ : ’خلع’ کو آسان بنانے کی کامیاب مہم

 

 

سراج انور /پٹنہ

طلاق- طلاق -طلاق,  ان تین لفظوں پر ملک میں سماجی, مذہبی اور سیاسی سطح پر ہر دور میں بحث ہوئی ہے- کبھی کوئی مردوں کی بالا دستی  کا رونا روتا ہے تو کبھی کوئی قانون میں خواتین کے حقوق پر سوال اٹھاتا ہے -کبھی کوئی مذہبی قوانین کے غلط استعمال کی بات کرتا ہے اور کبھی کوئی ملک کے قانون کے پر - ہر کوئی اپنے اپنے نظریے  کو جائز قرار دیتا ہے، اپنے اپنے جواز پیش کرتا ہے، اپنے دلائل کے ساتھ میدان میں اترتا ہے- مگر کوئی اس بات پر روشنی نہیں ڈالتا ہے کہ اسلام میں آخر خواتین کو طلاق کے تعلق سے کیا حقوق حاصل ہیں اور کیا خواتین اپنی مرضی سے طلاق لے سکتی ہیں یا نہیں - اگر لے سکتی ہیں تو اس کا طریقہ کیا ہے -  جسے ہم خلع کے نام سے جانتے ہیں- اس کے بارے میں خواتین کو کتنا علم ہے ، ایسے کیا اقدام کیے گئے ہیں جن کے سبب خواتین کو اس مرحلے سے گزرنے کے لیے دربدر کی ٹھوکریں نہ کھانی پڑیں اور وہ خود کو اپنی پسند کے مطابق کسی مرد سے آزاد کرانے کے لیے خلع کا استعمال کریں

عام تاثر اور اور ایک منظم پروپیگنڈہ یہی پیغام دیتا ہےکہ اسلام میں عورتوں کو مردوں کے برابر حقوق حاصل نہیں ہیں، لیکن یہ بالکل بے بنیاد ہے،اسلام میں عورتوں کو مردوں کے برابر اختیارات حاصل ہیں، اگر مرد کو طلاق کا حق ہے تو  عورتوں کو خلع کا اختیار دیا گیا ہے۔ مسلم معاشرے کو بدنام کرنے کے لیے طلاق پر بہت آوازیں اٹھتی ہیں، لیکن کوئی یہ نہیں بتاتا کہ خلع بھی اسلام میں ہے۔یہ خواتین کے لیے طلاق کے مترادف ہے۔

بہار میں خواتین ایسے  شوہروں سے خلع لے رہی ہیں جن کا ان کے ساتھ رویہ اچھا نہیں ہے۔ قاضی کے سامنے  پہنچنے کے بعد میاں بیوی کے درمیان صلح بھی ہو رہی ہے۔اس کے لیے چار ریاستوں کے مسلمانوں کی نمائندہ تنظیم ’امارت شرعیہ‘ میں ایک دارالقضاء کے سبب خواتین کا بڑا مسئلہ حل کیا جارہا ہے-

ریکارڈ روم میں فائلوں کے ڈھیر

پچھلے ایک سال کے ریکارڈ کے مطابق پٹنہ کے پھلواری شریف میں واقع اس مذہبی ادارے میں 118 خلع کیسوں کو حل کیا گیا ہے، کل کیسز 572 ہو گئے ہیں، جن میں طلاق کے کیس بھی شامل ہیں۔ یہاں ہفتہ اور اتوار کو خصوصی طور پر خلع اور طلاق کے کیسز نمٹائے جاتے ہیں

خلع کیسے ؟

خلع کی درخواست دارالقضاء میں دی جاتی ہے۔ اس کے ساتھ 500 روپے بطور فیس جمع کرائے جاتے ہیں، پھر درخواست کی تصدیق ہوتی ہے، اس کے بعد تاریخ آتی ہے، اس تاریخ کو دونوں فریقین کو قاضی کے سامنے پیش ہونا ہوتا ہے، اس میں کسی کی سفارش نہیں ہوتی، اس سے بھی گریز کیا جاتا ہے۔خواہ رشتہ دار ہی کیوں نہ ہو۔فیصلے میں پوری دیانت داری سے کام لیا جاتا ہے۔پہلے دونوں طرف سے صلح کی پہل کی جاتی ہے-

صلح نہ ہونے کی صورت میں فیصلہ سنا دیا جاتا ہے۔

ہنگامہ آرائی سے بچنے کے لیے فیصلہ تحریری طور پر بھیجا جاتا ہے۔ اکثر فیصلے پر کوئی اعتراض نہیں ہوتا۔کیونکہ درخواست کے وقت ہی حلف لیا جاتا ہے کہ قاضی کا فیصلہ دونوں فریق تسلیم کریں گے۔

ایک کام ۔ ایک خدمت 

نائب قاضی کے فیصلے کے خلاف اپیل کی جا سکتی ہے۔ قاضی اور قاضی کے خلاف امیرِ شریعت سے۔ گزشتہ ایک سال میں ایک بار قاضی کے خلاف امیر شریعت سے اپیل کی گئی لیکن شکایت درست نہیں پائی گئی۔دارالقضا کا نمونہ ہندوستانی عدالت سے ملتا جلتا ہے۔تاہم چیف قاضی مفتی محمد انظرالم قاسمی کہتے ہیں کہ دارالقضاء کوئی متوازی عدالت نہیں ہے

طلاق کے کیس نہیں لیے جاتے

دارالقضاء طلاق کا معاملہ نہیں لیتاا۔مفتی عالم کا کہنا ہے کہ اگر مرد طلاق لینا چاہتا ہے تو اس کی درخواست نہیں لی جاتی، شریعت میں طلاق دینے کا اختیار ہے۔

مفتی عالم کے مطابق اسلامی کیلنڈر 1443۔ ہجری سال 11 اگست 2021 سے 30 جولائی 2022 تک دارالقضاء میں کل 572 کیسز رپورٹ ہوئے جن میں سے زیادہ تر خلع کے تھے، 118 خلع کے معاملے میں فیصلے کیے گئے۔ باقی میں فیصلے آنے والے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ جس طرح دیگر مسائل میں اضافہ ہوا ہے، ظاہر ہے کہ خلع کے کیسز میں بھی اضافہ ہوا ہے، آبادی کے مقابلے میں اب بھی بہت کم ہیں۔ دارالقضاء صرف ثالثی کرتا ہے، ہماری کوششیں مصالحت ہیں۔ لوگ یہاں سے اکثر مطمئن ہو کر چلے جاتے ہیں، فیصلے قرآن، حدیث کی روشنی میں سنائے جاتے ہیں، نہ کوئی گارڈ نہ پولیس، اس کے باوجود امن قائم ہے

 

کم خرچ پر مقدمات کا تصفیہ

آج جہاں ملک کی عدالتوں میں ہزاروں مقدمات زیر التوا ہیں، وہیں عام آدمی کے لیے انصاف اب سستا نہیں رہا، دارالقضاء کم خرچ اور کم وقت میں ریلیف فراہم کرکے عدالتوں کے بوجھ کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ فیصلہ ایک دن میں ہو جاتا ہے، صبح ہوتی ہے اور شام تک دونوں فریق خوشی خوشی گھر لوٹ جاتے ہیں، اس مہینے کے اس مہینے میں مقدمات کم ہی نمٹتے ہیں، ڈاک اور کاغذ کی وجہ سے صرف 500 روپے فیس لی جاتی ہے، اخراجات پورے کیے جا سکتے ہیں۔ رسید بھی دی جاتی ہے یہ فیس بہت غریب لوگوں سے نہیں لی جاتی ہے۔

دارالقضاء کیا ہے؟

دارالقضاء ایک قسم کی عدالت ہے لیکن یہ ایک اسلامی عدالت ہے، یہاں شریعت کی روشنی میں فیصلے سنائے جاتے ہیں، دارالقضاء میں بالخصوص نکاح اور طلاق کے مقدمات کی سماعت ہوتی ہے۔ بعض اوقات وراثتی جائیداد سے متعلق مقدمات کی سماعت بھی ہوتی ہے، دارالقضا میں کبھی ایک یا کبھی دونوں فریق درخواست دیتے ہیں، مقدمہ درج ہونے کے بعد دارالقضاء دونوں فریقین کو سماعت کے لیے بلاتا ہے۔

شراب نوشی میں اضافہ اور غیر مسلم مسئلہ

بہار شریف سے ایک غیر مسلم بھی زمین کے تنازعہ کو لے کر آئے، دارالقضاء کی تاریخ میں یہ پہلا مسلم کیس تھا جسے حل کیا گیا، اس وقت جھارکھنڈ، اڑیسہ اور دارالقضاء کی 82 شاخیں کام کر رہی ہیں۔ امارت شرعیہ کے بہار سمیت بنگال .احمد فیصل رحمانی کے امیر شریعت بننے کے بعد 10 نئے دارالقضاء کھولے گئے ہیں

 قاضیوں کی تعیناتی

دارالقضاء پورا نظام چلتا ہے ایک الگ ریکارڈ روم ہے مرکزی قاضی کے لیے الگ چیمبر ہے اسسٹنٹ قاضی کے لیے کمرے بھی ہیں ایک ہال میں بہت سے سٹاف کام کرتا ہے صرف پھلواری شریف میں 18 اسٹاف تعینات ہے۔

نائب قاضی اور تین ساتھی قاضی بھی مقرر ہیں، قاضی بھی مختلف شاخوں میں کام کر رہے ہیں، لیکن فیصلہ کا حق چیف قاضی مفتی محمد انجر عالم قاسمی کے پاس ہے۔

۔مولانا وصی احمد قاسمی، مولانا فضل الرحمان۔ سہیل اختر قاسمی، مولانا مجیب الرحمان قاسمی ہیڈ آفس میں اور مولانا مفتی مجیب الرحمان قاسمی بطور رفقاء، امتیاز احمد قاسمی ہیں جبکہ شمیم اکرم رحمانی نامزد ہیں۔