سنتور اور رباب کے درد کے ساتھ زندہ ہیں غلام محمد زاز

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | Date 05-07-2024
سنتور اور رباب کے درد کے ساتھ زندہ ہیں غلام محمد زاز
سنتور اور رباب کے درد کے ساتھ زندہ ہیں غلام محمد زاز

 

باسط زرگر، سری نگر

سری نگر میں دریائے جہلم کے کنارے ایک خستہ حال اور بکھرے ہوئے کمرے میں، ایک بزرگ رہتے ہیں جن کا نام غلام محمد زاز ہیں۔ یہ خرابہ ،کچھ میوزک انسٹومنٹس سے آباد ہے کیونکہ غلام محمد سنتور اور رباب بناتے ہیں جن کی آواز لاکھوں دلوں کو مسحور کرتی ہے۔ اس بے ترتیب کمرے کی خاموش فضا کو آلات موسیقی کی آواز نہیں توڑتی ہے بلکہ غلام محمد کے کام کرنے کی آواز توڑتی ہے۔ یہ مقام اس لئے اہمیت کا حامل ہے کیونکہ تین صدیوں سے یہیں ان کے آباؤ اجداد نے کشمیر کے بہترین سنتور اور رباب بنائے ہیں، یہ دونوں روایتی تار والے ساز ہیں۔

اب، 74 سالہ غلام محمد زاز اس لائن میں آخری نمبر پر ہیں۔ ان کے بعد خدشہ ہے کہ اس روایتی کام کو کرنے والا کوئی نہ ہو۔ وہ بتاتے ہیں کہ ہم لوگ پچھلے 300 سالوں سے رباب اور سنتور بنا رہے ہیں۔ ہم نے یہاں کشمیر کا پہلا سنتور بنایا۔ وادی کے تمام بڑے فنکار ہمارے سنتوربجاتے تھے۔ واضح ہوکہ زاز کشمیر کے سنتور اور رباب بنانے والوں کے سب سے مشہور اور معزز خاندان کی آٹھویں نسل کی نمائندگی کرتے ہیں۔ تین صدیوں تک، ان کے خاندان نے وادی کے سب سے نامور صوفیانہ موسیقاروں کو ان کے آلات فراہم کیے؛ جب کہ اس کے خاندان نے موم بتی کی روشنی میں کامل آلات بنانے کی کوشش کی، زاز نے کئی راتیں گزاریں۔

awaz

انھوں نے دیکھ کر ، اس فن کو سیکھا اور اب وہ اس کے آخری ماہر کاریگر ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ میں 15 سال کا تھا جب میں نے اپنا پہلا سنتور بنایا۔ میں نے اپنے والد کو کام کرتے ہوئے بہت غور سے دیکھا پھر میں نے اخروٹ کی لکڑی کا ایک ٹکڑا اٹھایا اور ایک سنتور بناڈالا۔ میں تب تک اپنے والد اور دادا کے پاس بیٹھ کر ان کے کام کو دیکھتا رہا جب تک کہ میں ان کے بنائے ہوئے تمام آلات کو بنانا سیکھ نہیں لیا۔

زاز نے بتایا کہ سنتورکا فارسی میں مطلب ہے "سو تارا"۔ ۔15 ویں صدی کے فارسی افراد کے ساتھ کشمیر تک پہنچا۔ دنیا کے کئی حصوں میں سنتور کے مختلف ورژن موجود ہیں، زیادہ تر تاروں کی تعداد کے لحاظ سے مختلف ہیں۔ فارسی سنتور کے اب 72 تار ہیں، چینی ورژن میں 45 اور جرمن ہیں۔ 135 ہیں۔ زاز بتاتے ہیں کہ کشمیری سنتور ایک ٹریپیزائڈ کی شکل کا ہتھوڑا والا ڈلسیمر ہے، جس کے سو تاروں کو مڑے ہوئے مالٹوں کے جوڑے سے مارا جاتا ہے جسے مضراب کہا جاتا ہے۔

سنتور، رباب کے ساتھ، کشمیری لوک اور صوفی سنگیت کا ایک لازمی جزو ہے۔ وہ فخریہ بتاتے ہیں کہ گزشتہ صدیوں کے دوران، صوفیانہ موسیقی نے شاہی درباروں اور امیروں کی محفلوں میں رونق بخشا۔ زاز خاندان کو بھی اس کے ساتھ بلندی حاصل ہوئی۔ وہ دور آج سے بہت مختلف تھا۔ ہر کوئی اس فن کی وجہ سے ہمارا احترام کرتا تھا۔ ہمارے ساتھ فنکاروں کی طرح سلوک کیا گیا اور ہمارے فن کے لیے بہت اچھا معاوضہ دیا گیا۔ آج، کشمیر میں بدلتے وقت اور تیز رفتار زندگی کے درمیان، زاز محسوس کرتے ہیں کہ اپنی بوسیدہ مکان کے ساتھ پیچھے رہ گئے ہیں، جہاں گاہک کمیاب ہیں اور سنتور کے ماہر اور بھی نایاب۔

وہ کمرے کے ارد گرد اشارہ کرتے ہیں اور پرانے دنوں کی باتیں کرتے ہیں، جب ان کی دکان اورزندگی دونوں روشن تھی۔ کمرے کی دیواریں اب کئی دہائیوں کی آگ سے سیاہ ہو چکی ہیں جو خاندان کی طرف سے اخروٹ کی لکڑی کو گرم کرنے کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ ہر کوئی پیسہ کما رہا ہے،وہ یہاں آتے ہیں اور تصویریں کھینچتے ہیں اور میرے بارے میں لکھتے ہیں، اور وہ سب پیسہ کماتے ہیں لیکن مجھے کچھ نہیں ملتا۔ مجھے شک ہے کہ کیا اب یہ سب کام کرنے کے قابل ہے۔

awaz

زاز کی تین بیٹیاں ہیں، لیکن خاندان کے روایتی پیشہ ورثے میں کوئی بیٹا نہیں ہے۔ ان کی بیٹیوں نے کبھی یہ فن نہیں سیکھا اور اپنی پڑھائی کو جاری رکھا۔ وہ کہتے ہیں کہ مجھے خوشی ہے کہ میرا کوئی بیٹا اس فن میں نہیں ہے اور میرے بچوں میں سے کسی کو بھی اس طرح کی تکلیف نہیں اٹھانی پڑے گی جس طرح میں تکلیف اٹھا رہا ہوں۔ مجھے فخر ہے کہ میری بیٹیاں نئی ​​دنیا کا حصہ ہیں۔ کبھی کبھی، ایک رباب یا سنتور بیچنے میں مہینوں گزر جاتے ہیں۔ اب میرے کاروبار کا زیادہ تر انحصار سیاحوں اور غیر ملکی گاہکوں پر ہے۔