ہم ملک، آباؤ اجداد، ثقافت اور روایت کے اعتبار سے ہندوستانی مسلمان ہیں: مسلم راشٹریہ منچ

Story by  اے ٹی وی | Posted by  [email protected] | 18 d ago
ہم ملک، آباؤ اجداد، ثقافت اور روایت کے اعتبار سے ہندوستانی مسلمان ہیں: مسلم راشٹریہ منچ
ہم ملک، آباؤ اجداد، ثقافت اور روایت کے اعتبار سے ہندوستانی مسلمان ہیں: مسلم راشٹریہ منچ

 

غازی آباد، 11 فروری۔ ملک کی یکجہتی، سالمیت، خودمختاری اور ہم آہنگی کو برقرار رکھنے کے لیے مسلم راشٹریہ منچ ملک بھر میں ’’ آؤ جڑوں سے جڑیں ‘‘ مہم کو بھرپور طریقے سے وسعت دے گا۔ "آؤ جڑوں سے جڑیں" کا بنیادی منتر یہ ہے کہ اگرچہ  ہمارا عقیدہ کچھ بھی ہو، ہمیں اس نسب کی خدمت، حفاظت  کے لیے آگے بڑھنا چاہیے جس میں ہم پیدا ہوئے ہیں۔ مسلم راشٹریہ منچ کی قرارداد ہے کہ ہم اپنے ملک کے ساتھ، اپنی ثقافت کے ساتھ، اپنے بزرگوں کے ساتھ ایک تھے، ایک ہیں اور ہمیشہ ایک رہیں گے۔سنگھ کے سینئر لیڈر اور پلیٹ فارم کے چیف سرپرست اندریش کمار کی صدارت میں مسلم راشٹریہ منچ نے اپنی دو روزہ ورکشاپ میں ان چیزوں کو متفقہ طور پر منظور کیا۔ اس دوران شری رام، یو سی سی، طلاق، حجاب، متنازعہ زمین پر عبادت گاہوں، آباؤ اجداد، روایات، ثقافت، حب الوطنی اور ہندوستانیت کے مسائل پر اہم فیصلے لیے گئے۔ ملک دشمنوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کی بھی وکالت کی گئی۔ سٹیج انچارج شاہد سعید نے ورکشاپ کے بارے میں تفصیلی معلومات دیں۔
دو روزہ ورکشاپ میں اندریش کمار، آر ایس ایس میرٹھ پرانت پرچارک سوریہ پرکاش ٹونک، پروفیسر راجیو سریواستو، قومی کنوینر محمد افضل، شاہد اختر، اسلام عباس، ابوبکر نقوی، اسلام عباس، سوامی مراری داس، خورشید رزاق، صوفی شاہ ملنگ اور دیگر نے شرکت کی۔ حقانی، راجہ رئیس، فیض خان، گریش جویال، حاجی صابرین، عمران چودھری، شالینی علی، تشرکانت سمیت کئی عہدیدار موجود تھے۔ وہاں موجود 500 سے زیادہ کارکنوں میں سے بہت سے مسلمان تھے جنہوں نے ایودھیا میں شری رام مندر کا دورہ کیا تھا۔ 
ورکشاپ میں فورم کے قومی کنوینر شاہد اختر نے واضح طور پر کہا کہ جڑوں میں شامل ہونے کا مطلب کسی قسم کی مذہبی تبدیلی نہیں ہے۔ بلکہ یہ ضروری ہے کہ لوگ اپنی روایات اور آباؤ اجداد سے زیادہ سے زیادہ جڑیں کیونکہ ہندوستانی مسلمان وہ مسلمان نہیں ہیں جو کسی بیرونی ۔ یہ سب یہاں کے رہنے والے ہیں اور پہلے سناتنی تھے جنہوں نے بعد میں اپنا مذہب تبدیل کر لیا۔
 
awazurdu پروگرام کا منظر

شاہد اختر نے یونیورسٹیوں میں  کنفلکٹ مینجمنٹ کے کورسز پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے کام کے ذریعے لوگ اپنی تاریخ اور وراثت کو جان سکیں گے۔ اس کے لیے انہوں نے مختلف علاقوں میں جا کر ڈیٹا اکٹھا کرنے کا کہا۔ انہوں نے کہا کہ بی ایچ یو میں اس پر زور دیا جا رہا ہے۔ یہ قدم مزید اٹھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے اس مہم کو ترقی یافتہ ہندوستان کے لیے بہت اہم قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ اس سے جنونیت اور فرقہ پرستی ختم ہو جائے گی اور ہم سب ایک دوسرے کے قریب ہوں گے۔
اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے اندریش کمار نے کہا کہ اگر ہمیں اپنا شجرہ  معلوم ہو تو ہمیں پتہ چل جائے گا کہ چند نسلیں پہلے ہم کون تھے، ہمارا گوتر کیا تھا؟ ہمارے آباؤ اجداد کا خاندان کہاں ہے؟ خاندان کے باقی لوگ کہاں ہیں؟ تم کیا کر رہے ہو؟ اگر ہم ان سے اپنی ملاقات ممکن بنا لیں تو ہم خود بخود ملک کے اتحاد و سالمیت کے ماننے والے بن جائیں گے۔ مذہب مختلف ہونے کے باوجود ہماری جڑیں ایک ہیں۔ ویسے بھی مذہب آپس میں نفرت کا درس نہیں دیتا۔
اندریش کمار نے کہا کہ دنیا بھر کے ممالک میں دہشت گردانہ حملے ہو رہے ہیں، چاہے وہ روس ہو، یوکرین ہو، اسرائیل ہو، فلسطین ہو یا ترکی ہو یا ایران ان کے درمیان... حکومت ہند اور مسلم راشٹریہ منچ نے ایک آواز میں کہا کہ دہشت گردی دنیا کے کسی بھی حصے میں غیر انسانی تھا اور ہمیشہ رہے گا۔ اگر ہم بنیاد پرست اور مذہبی بن گئے تو زہر آلود ہو جائیں گے۔ بھارتی حکومت نے کئی ٹرک ادویات، کپڑے اور اناج غزہ بھیجے۔ اسی طرح اندریش کمار نے جی 20 کے معاملے میں نریندر مودی حکومت کی تعریف کی اور اسے بے مثال قرار دیا۔
ان تمام موضوعات پر اپنے خیالات دیتے ہوئے اندریش کمار نے  کنفلکٹ منیجمنٹ ک بارے میں کہا کہ اگر ہر ایک کا خاندانی درخت دیکھا جائے تو پوری دنیا کے 800 کروڑ لوگ واسدھائیو کٹمبکم کے تحت متحد ہو جائیں گے۔ اگر اس پر کام کیا جائے تو دنیا میں کہیں بھی نفرت نہیں ہوگی۔
اس دوران ملک کے اہم حصوں سے آئے ہوئے مسلمانوں سے خطاب کرتے ہوئے منچ کے صدر محمد افضل نے کہا کہ ہندوستان میں ہم سب کے آباؤ اجداد، ثقافت اور تہذیب ایک جیسی ہے۔ فورم نے تسلیم کیا کہ جو لوگ ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان فاصلے پیدا کرنا چاہتے ہیں، فرقہ واریت پیدا کرنا چاہتے ہیں، مذہب کے نام پر اسلام کو بدنام کرنے کے نام پر ملک کو توڑنا چاہتے ہیں، انہیں منہ توڑ جواب دیا جائے۔
awazurdu
awazurduاندریش کمار خطاب کرتے ہوئے

ورکشاپ میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ اپنے مذہب کی پیروی کریں، دوسرے مذاہب کا احترام کریں اور جنگوں، فسادات اور اچھوت سے پاک ملک بنائیں۔ ہم سب ہندوستانی تھے، ہندوستانی ہیں اور ہندوستانی رہیں گے۔ اس تناظر میں، سب نے اس بات پر اتفاق کیا کہ یو سی سی یعنی یونیفارم سول کوڈ سب کے لیے درست ہونا چاہیے۔ مسلم راشٹریہ منچ ایک جھنڈے، ایک ملک، ایک آئین کی حمایت کرتا ہے۔ اس معاملے پر یہ مان لیا گیا کہ یو سی سی ملک کو مضبوط کرے گا۔ مساوات کے قانون سے ہر کوئی فائدہ اٹھاتا ہے، یہ کسی مذہب یا برادری کے خلاف نہیں ہے۔ جو بھی اس مسئلے کو بھڑکانے کی کوشش کرتا ہے وہ امن اور خوشحالی کا دشمن ہے۔
ورکشاپ کے دوران اسلام اور قرآن کے حوالے سے بہت سی باتوں پر تبادلہ خیال کیا گیا جس میں اپنے ملک سے محبت کو اپنے ملک سے سب سے بڑی محبت اور سب سے بڑا ایمان سمجھا گیا۔ دانشوروں اور کارکنوں نے متفقہ طور پر اس بات پر اتفاق کیا کہ مذہب بدلا جا سکتا ہے لیکن آباؤ اجداد، روایت اور ثقافت کو تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔   
 صرف اس کو تبدیل کیا جا سکتا ہے۔ ورکشاپ میں یہ مسئلہ بھی اٹھایا گیا کہ جس طرح ماں کی جائے پیدائش جنت سے بڑی ہوتی ہے اسی طرح اسلام میں یہ عقیدہ ہے کہ جنت ماں کے قدموں میں ہے۔ اسی طرح وطن سے محبت اور تحفظ سب سے بڑا ایمان ہے اور ان چیزوں پر ہر گز سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا۔
مسلم راشٹریہ منچ کی ورکشاپ میں یہ بھی اٹھایا گیا کہ جب سب کا ایک مالک ایک  ہے تو پھر لڑائی یا فساد کیوں؟ اجلاس میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ اسلام کسی دوسرے مذہب کی توہین کی اجازت نہیں دیتا۔ اسلام دوسروں کے مذہبی مقامات اور عبادت گاہوں کو گرا کر اپنی عبادت گاہ بنانے کی بھی اجازت نہیں دیتا۔ لہٰذا ایسے تمام متنازعہ مقامات پر عبادت جائز نہیں جہاں مندروں کو گرا کر مسجدیں بنائی گئی ہوں۔ ایسی جگہیں ہندوؤں کے حوالے کر دی جائیں۔
ورکشاپ میں طلاق کا موضوع بھی آیا۔ سب نے اس بات پر اتفاق کیا کہ طلاق کو اسلام میں بدترین اعمال میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ دانشوروں نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ طلاق دینا چاہتے ہیں تو غصہ، نفرت اور تشدد کو طلاق دیں... اس سے ہر ایک کی زندگی میں انقلابی تبدیلی آئے گی اور باہمی ہم آہنگی بڑھے گی۔