اومی کرون کے خلاف معقول اقدامات اٹھائیں:عالمی ادارہ صحت

Story by  غوث سیوانی | Posted by  [email protected] | 2 Years ago
اومی کرون کے خلاف معقول اقدامات اٹھائیں:عالمی ادارہ صحت
اومی کرون کے خلاف معقول اقدامات اٹھائیں:عالمی ادارہ صحت

 

 

جنیوا،نئی دہلی: عالمی ادارہ صحت نے حکومتوں سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ گھبرائیں نہیں اور کورونا وائرس کی نئی اور تیزی سے پھیلتی ہوئی قسم اومی کرون کے خلاف معقول اقدامات اٹھائیں۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق منگل کو ایک بریفنگ کے دوران عالمی ادارہ صحت کے سربراہ ٹیڈروس ادہانوم نے تمام رکن ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ معقول اور خطرے کو کم کرنے کے لیے مناسب اقدامات اٹھائیں۔

انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کی نئی قسم کے خلاف عالمی سطح پر ردعمل پر سکون اور مربوط ہونا چاہیے۔ عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ ’صرف سفری پابندیوں سے اومی کرون کے پھیلاؤ کو نہیں روکا جا سکتا۔

‘تقریباً ایک ہفتے قبل اومی کرون وائرس جنوبی افریقہ میں سامنے آیا تھا جو تیزی سے کئی ممالک میں پھیل گیا۔ کورونا کی نئی قسم سامنے آنے کے بعد درجنوں ممالک نے سفری پابندیوں کا اعلان کرتے ہوئے اپنی سرحدوں کو بند کردیا۔

کیا ہندوستان کی ویکسین اومی کرون کے خلاف موثر ثابت ہو سکتی ہے؟ ہندوستان کی بھارت بائیو ٹیک تحقیق کر رہا ہے کہ کیا اس کی ویکسین کوویکسین اومی کرون کے خلاف کام کر سکتی ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق دواساز کمپنی موڈرنا کے سی ای او نے خبردار کیا تھا کہ ’موجودہ ویکسینز اومی کرون کے خلاف کم موثر ثابت ہوں گی۔‘

منگل کو ہندوستان کی بھارت بائیو ٹیک نے کہا ہے کہ وہ اومی کرون سمیت کورونا وائرس کی مختلف اقسام کے خلاف اپنی ویکسین کوویکسین کے موثر ہونے کے حوالے سے تحقیق کر رہا ہے۔

بھارت بائیو ٹیک کے ترجمان نے روئٹرز کو بتایا کہ ’کوویکسین ووہان میں کورونا وائرس کی ابتدائی قسم کے خلاف تیار کی گئی تھی۔‘ ’اس نے دکھایا ہے کہ یہ کورونا وائرس کی ڈیلٹا قسم سمیت دیگر اقسام کے خلاف کام کر سکتا ہے۔ ہم نئی اقسام کے خلاف بھی تحقیق کر رہے ہیں۔‘

موڈرنا کے سی ای او سٹیفن بنسل نے فنانشل ٹائمز کو ایک انٹرویو میں بتایا تھا کہ کورونا وائرس کی موجودہ ویکسینز جتنی ڈیلٹا ویریئنٹ کے لیے موثر تھیں اتنی وائرس کی نئی قسم کے خلاف نہیں ہوں گی۔

عالمی سطح پر کورونا کی نئی قسم سامنے آنے کے بعد ہندوستان کی وزارت صحت نے ریاستوں کو ہدایت کی ہے کہ کورونا وائرس کے خلاف ٹیسٹنگ کے عمل کو تیز کر دیں۔

گذشتہ ہفتے انڈین وزارت صحت نے ریاستوں کی حکومتوں کو خبردار کیا تھا کہ کورونا وائرس کے کیسز کے لیے ٹیسٹ میں کمی وبا پر قابو پانے کے لیے ہندوستان کی کوششوں کو نقصان پہنچا سکتی ہے۔

ہندوستان میں فی الحال اومی کرون کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا ہے تاہم حکام کورونا وائرس سے متاثرہ ایک ایسے شخص کے سیمپل پر تحقیق کر رہے ہیں ، جو حال ہی میں جنوبی افریقہ سے واپس آئے ہیں۔

حکام یہ معلوم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ آیا وہ اومی کرون یا کورونا وائرس کی کسی اور قسم سے متاثر ہوئے۔ ممبئی کی میونسپل کارپوریشن نے کہا ہے کہ اومی کرون سے متعلق عالمی صورت حال کے پیش نظر احتیاطی اقدام کے طور پر چھوٹے بچوں کے اسکول اب بدھ کے بجائے 15 دسمبر کو کھولے جائیں گے۔

ملک میں اپریل اور مئی میں کورونا وائرس کے کیسز اور اموات میں ریکارڈ اضافے کے بعد اب کورونا کیسز میں کافی حد تک کمی آئی ہے۔ (ایجنسی)